“میربل شاری ___________ثروت نجیب ــــ

*************** بےتابی سے انتظار کرتی دو آنکھیں وجود کے ہر مسام میں ڈھل چکی تھیں ـ شب اپنی گہرائی پہ … More

تجھے معلوم ہے میرے چارہ ……..رضوانہ نور

بہت دیر وہ یوں ہی رائٹنگ ٹیبل پہ قلم پکڑے منتظر تھی کہ کب اس کا دل اجازت دے اور … More

وصل__________از صوفیہ کاشف

💖 پھولوں اور خوشبوؤں سے بھرپور اک باغ تھا جسمیں ہر طرف روپہلے،اودے،کاسنی،قرمزی،نارنگی جامنی اور گلابی پھول اوپر نیچے،دائیں بائیں … More