پتے اور شجر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔از میمونہ صدف

اے میرے ہم وطنو! کبھی دیکھا تم نے خزاں رسیدہ پتے کو جب جب شجر سے جدا ہوا پہلے تو ہوا سنگ بہت اڑا پھر جب گرا قدموں تلے روندا گیا شجر تو قائم رہتا ہے نئے پتوں کا گھر بنتا ہے جو اسے سے جڑے اپنا اور اس کا تن سجائے رہتے ہیں یہ […]

Read More…

یاد ہے تم کو!!!

یاد ہے تم کو مجھے تم تتلی کہتے تھے رانی .شہزادی کہتے نہ حائل تھا کچھ درمیاں ہمارے میری پکار تجھے کھینچ نہ لائی تھی یاد ہے تم کو اپنی تتلی اپنی رانی خود ہی گھائل کر بیٹھے مصروفیت آڑے آئی اک دوجے کو بھلا بیٹھے ہاں یاد ہے مجھ کو , میرے ہاتھوں کو […]

Read More…