محجوب_________از ثروت نجیب

خود سے پرے ‘ خدا سے جدا ‘ رہتا ہوں پریشاں اُس گھر کے لیے ـــ
میں دن بھر جس میں رہتا ہی نہیں !!!!
شام ڈھلے ‘ شب کے سایے تلے ‘ میرا خواب پلے ـــ
جس میں ہے روشنی نئی نسل کے لیے ـ ـ ـ ـ

Advertisements

  “ابوــــــ”از ثروت نجیب

💝ابو۔۔۔ ہمارے گھر کی دیوار کا وہ بیرونی حصہ تھے’ جس پہ ہر آتا جاتا جو بھی اس کے من … More

   “یادش بخیر “

نہیں خبر سکوں میرا کس قریہِ جاں میں کھو گیا رنجشیں ہی رنجشیں ملامتیں ‘ پشیمانیاں الجھنوں میں گِھرا یہ … More

“سیاہ کار بھیڑیا اور خون آلود پری”________از …..ثروت نجیب

نازک جسم کے زاویوں کو تراشو وحشت کی آنکھ سے اور نوچو اپنی ہوس سے یوں کہ چیخ گلے میں … More

“گنجلک بیلیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔…ثروت نجیب

ہزاروں باتیں دل کی مُنڈیروں پہ چڑھی گھنی بیلوں کی مانند بےتحاشا بڑھتی جا رہی ہیں کشف کے کواڑوں پہ … More

“شب گزیدہ آنکھیں”_____از ثروت نجیب

شب گزیدہ آنکھیں تخیل کیا کریں گی اب حسین کرنوں کی رونمائی کا جو مٹی چھو کے سونا بناتی ھیں … More

” کٹھ بڑھئی”______از ثروت نجیب

نظم نگار…ثروت نجیب ” کٹھ بڑھئی” کروڑوں سال قبل زمین کو پتھر کے زمانے سے بنی آدم آباد کرنے کے … More