محجوب_________از ثروت نجیب

خود سے پرے ‘ خدا سے جدا ‘ رہتا ہوں پریشاں اُس گھر کے لیے ـــ
میں دن بھر جس میں رہتا ہی نہیں !!!!
شام ڈھلے ‘ شب کے سایے تلے ‘ میرا خواب پلے ـــ
جس میں ہے روشنی نئی نسل کے لیے ـ ـ ـ ـ

Read More…
Advertisements

  “ابوــــــ”از ثروت نجیب

💝ابو۔۔۔ ہمارے گھر کی دیوار کا وہ بیرونی حصہ تھے’ جس پہ ہر آتا جاتا جو بھی اس کے من میں آتا ! لکھ جاتا ــــ وہ سہہ جاتے ‘ چپ رہ جاتے جب سے وہ دیوار گری ہے عیاں ہے سارے گھر کا منظر کیا باہر اور کیا اندر ــــ دیوار سے لپٹی کاسنی […]

Read More…

   “یادش بخیر “

نہیں خبر سکوں میرا کس قریہِ جاں میں کھو گیا رنجشیں ہی رنجشیں ملامتیں ‘ پشیمانیاں الجھنوں میں گِھرا یہ دل حیرانیاں در حیرانیاں شکست خورہ حال میں بیتے ہوئے ہر اک پل کی تھکی تھکی کہانیاں ضبط کے باوجود اشکوں کی روانیاں ہرے ہرے زخم سبھی درد کی جوانیاں ہر اک کنج جان کی […]

Read More…

“ابلہی”__________از ثروت نجیب

ہتک آمیز لفظوں کی دو دھاری تلوار پہ چل کے گھائل کر دو ـ ـ ـ ـ خود کو دست و پا! کس نے کہا تھا؟ میری دستار کے بل سے الجھوـــ میرے آج اور کل سے الجھو ــــ کس نے کہا تھا؟ مزاح کو ظرافت کے معیار سے اتارو ! ہوا کو پتھر مارو! […]

Read More…

“سیاہ کار بھیڑیا اور خون آلود پری”________از …..ثروت نجیب

نازک جسم کے زاویوں کو تراشو وحشت کی آنکھ سے اور نوچو اپنی ہوس سے یوں کہ چیخ گلے میں رہ جائے ظلم کی انتہا ‘ بے رحم صدا عِصمت کے تجار ‘ قہرو قضا یہ گندم گوں نازک اندام غزال آنکھیں’ کلی سی خام اپنی جنت سے دور پریاں کسی کے بام کی چاندنی […]

Read More…

  ” بد نصیب باشندے”_____ثروت نجیب

شکستہ محلات کے دریچوں سے جھانکتی آہیں قرن ہا قرن قدیم کوچے کھنڈر کھنڈر جوان بیواؤں کی طرح بین کرتی ہوئی لرزتی راہیں خشک اشکوں سے گریہ کرتی ہوئی گلیاں ساری بکھرے کواڑ ‘ جا بجا ٹوٹی ہوئی کھڑکیوں کی باہیں لڑکھڑاتی ہوئی ہر عمارت کو اس خوف سے تکتی سڑکیں اکھڑے ہوئے وجود پہ […]

Read More…

چاند… ثروت نجیب

جب چاند سے بالا تر چاند کے روبرو ہو ایسے جلوہ گر کہ چاندنی بھی نہ آئے نظر تو ایسے میں اے دیدہ ور حالات کے پیشِ نظر تو ہی بتا؟ چاند کس کو کہیں؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ثروت نجیب وڈیو دیکھیں! چلیے چھ سالہ حماد کے ساتھ ایبٹ آباد😍

Read More…