جب تک۔۔

دھڑکن میں اک سر ہے باقی💖 جب تک روح ہے محو رقص اور پلکوں کی چلمن پر روشنی ابھی تک زندہ ہے سوچ کی بارہ دریؤں میں بجلی ابھی بھی باقی ہے رات ڈھلتے سمے سے ہی پلکوں کی بھاری چلمن پر زہریلے کانٹے ظاہر ہونگے نیند بھری آنکھیں ساکن ہوں گی دل بے چین […]

Read More…

زندگی

زندگی اک دھوپ چھاؤں کا کھیل ہے! کبھی تپتی چمکدار روشنی اندھیرے تاریک کونوں میں اجالے سے بھر دیتی ہے کبھی آسماں سے برستی تاریکیاں ساری روشنیاں نگل جاتی ہیں! کبھی خوشبو بھرے رنگیں پھول ڈالیوں پر لہراتے اور گاتے ہیں کبھی سبز پتے بھی سوکھ کر ہواوں سے اڑ جاتے ہیں کبھی ستارے بھی […]

Read More…

حد__________صوفیہ کاشف

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “چلو تمھارے ساتھ چلتا ہوں!” “کہاں تک چلو گے؟” “جہاں تک تم چاہو!” اگر میں کہوں کہ زمان و مکان کی آخری حد تک؟؟؟تو چلو گے ساتھ؟!” “اگر تم کہو گی کہ مکاں سے لا مکاں تک ,,,,تو بھی چلوں گا!” میں اسکے چہرے کی طرف مڑ کر اسکی آنکھوں کے رنگ کھوجنے لگی […]

Read More…

Note to self by Connor Franta________ کتاب تبصرہ از صوفیہ کاشف

ایک چوبیس سالہ بلاگر ،انسٹاگرامر Connor Franta ,جسکی پہلی کتاب A work in Progress بہترین سوانحی عمری اور یاداشت کے طور پر نیویارک ٹائمزبیسٹ سیلر رہی ہے۔یہ کتاب اسکے زاتی احساسات اور واقعات اور اپنی شخصیت کے اندرونی تہہ خانوں تک روشنی کی لہریں لیجانے اور انکی تاریکی کو اجالے میں بدلنے کے سفر کی […]

Read More…

اس سے پہلے۔۔۔۔۔۔۔صوفیہ کاشف

اس سے پہلے کہ تلاطم خیز لہریں ہماری ڈوبتی ابھرتی کشتی کو گہرائیوں میں دفن کر دیں اور ہمارے ریختہ ٹکڑے لہروں پر نشان عبرت بنے خوفزدہ لوگوں کو اور پریشاں کریں اس سے پہلے کہ طلب کی بادو باراں میں گر پڑیں ہماری احتیاط کی چھتیں! اس سے پہلے کہ باغوں کے جھولے بنیادوں […]

Read More…

دیوانے۔۔۔۔۔۔۔از صوفیہ کاشف

💝یہ دیوانے ہیں۔ کتاب کھولے دیوار پڑھتے ہیں کھلی آنکھوں خواب بنتے ہیں بند آنکھوں تلاشتے پھرتے ہیں یہ دیوانے ہیں ریت پر گھنٹوں بیٹھے لہروں سے بات کہتے ہیں ہواؤں سے سرگوشیاں گھٹاؤں کے سنگ رات کرتے ہیں یہ جنکی آنکھوں سے تعبیریں موتی بنکر جھڑتی ہیں یہ جنکی ہتھیلیوں سے منزل !ریت بنکر […]

Read More…

کتابیں جھانکتی ہیں۔۔۔۔۔

میرے دوستوں کی اکثریت میری کتاب کی محبت کی شیدائی ہے۔ اکثر لوگوں سے دوستی میری صرف اس محبت کی بنا پر جنم پای ہے۔مگر میں کیسے سب کو بتاؤں کہ یہ محبت میرے لیے کسی لاحاصل محبت سے ذیادہ نہیں۔یہ مجھے اسی طرح تڑپاتی ہے جیسے کوی پردیسی محبوب دور بیٹھے چاہنے والے کو […]

Read More…