سفرِ حجاز اقدس اور میں

قسط نمبر 2

“دیدارِ کعبہ “

کل مجھے ایک 85 سالہ اماں بی نے عمرے پہ جاتے ہوئے بتایا کہ وہ پچھلے بیس سالوں سے تہجد میں روزانہ اپنے رب کے حضور جانے کی دعا کر رہی تھیں…

میں حیران رہ گئ…. پھر احساس ہوا کہ جس کے دل میں اتنا ارمان ہو تو رب کعبہ انھیں کیسے نہ بلاتا! سبحان اللہ،

یہ ہوتا ہے شوقِ ولایت!

مگر دوسری طرف کچھ معصوم ایسے بھی ہیں جو یہ تمنا دل کی دل میں لیے ہی اس دنیا سے رخصت ہو جاتے ہیں. اس لیے جس کو یہ سعادت نصیب ہو وہ جان لے کہ رب العزت نے کوئی بہت ہی خاص کرم کا معاملہ کیا ہے ان کے ساتھ.

مجھ خطا کار کو اس بات کا بخوبی ادراک تھا اسی لیے جب شوہر مجھے ایکسٹرا کیش، ایکسٹرا ھدایات کے ساتھ رخصت کر رہے تھے تو میرے دل کی لگی کچھ اور تھی.. کہنے لگے…

یہ بھی پڑھیں: بلاوہ_ سفر حجاذ اور میں

” تو تم مجھے چھوڑ کے جا رہی ہو؟” میں نے بے دھیانی میں کہا کہ ” میں خود کو پانے جا رہی ہوں” بیٹی نے گلے لگا کے کہا ” ماما، آپ کے پاؤں دکھ جاتے ہیں فوراً دوا لے لیجے گا” مگر میرا دل دنیا اور رشتوں سے ماورا کسی اور دھن میں تھا. اسوقت نہ ائرپورٹ کا رش برا لگا نہ لمبی لائنوں کی ابتری….مجھے تو اپنا قبلہ اول کا دیدار مطلوب تھا. وہ، جس کی تعمیر طوفان نوح کے بعد حضرت ابراہیم نے خود اپنے ہاتھوں سے کی تھی اور دیوار ایستادہ کرتے ہوئے وہ پتھر جس پہ آپ کھڑے تھے، اس پہ آپ کے پیروں کے نقوش ثبت ہوگئے تھے جو آج بھی زائرین کی توجہ کا مرکز ہیں. جو ہر عمرہ کے ارکان کا لازمی جزوبھی ہے کہ نبی ابراہیم علیہ سلام کی عقیدت میں تمام عمرہ ادا کرنے والے قبلہ رخ ہوکر مقام ابراہیم کی موسوم دو رکعت نوافل ادا کرتے ہیں. یہی وہ وقت بھی تھا جب ایک فرشتہ جنت کا ایک پتھر حجر اسود لے کے نمودار ہوا جسے آپ نے کعبہ کی مشرقی جانب نصب کیا تھا…

میں اپنے دل میں ذوق نظارہ لیے، دل میں لبیک اللھم لبیک کا ورد کرتے ہوئے مطار ملک العبد العزیز ( جدہ ایرپورٹ ) پہ اتری تو نئی دنیا میں قدم رکھنے کا احساس ہوا جہاں زبان، لباس، طور طریقہ سبھی مختلف تھے. فضا میں ایک گھمبیر خاموشی تھی جیسے آنے والے سہمے ہوئے ہوں اور چھوٹی سی غلطی پہ سر قلم ہونے کا ڈر ہو. دوسرا خیال جو دل میں آیا وہ یہ بھی تھا کہ اکثریت احرام باندھے ہوئے ہے شاید یہ ادب اسی بات کا غماز ہے.وہ احرام جس میں کسی کا بال بیکا کرنا ممنوع ہے حتی کہ ایک چيونٹی کا بھی. امیگریشن کی لائینیں بے انتہا طویل تھیں اس لیے کھڑے کھڑے میں نے اطراف کا جائزہ لینا شروع کیا. میرے ارد گرد جو ابن آدم آئے تھے وہ سب چالیس سال سے اوپر کے ہوں گے. شاید اپنے رب کی کشش اسی عمر میں زیادہ محسوس ہوتی ہے کہ نبوت کی بھی یہی عمر ہے. میری نظر سفید براق کپڑوں میں ملبوس کمہلائے ہوئے چہروں پہ پڑی جن کے چہروں پہ فکروں کی دراڑیں تھیں. وقت نے بھلے ان سے ظاہری طمطراق چھین لیا ہو مگر ان کا جذبہ جو دل کے نہاں خانوں میں پنپتا ہے اس کو زک نہیں پہنچا سکا تھا. وہ بزرگ نما جوان تھیلا اٹھائے بغل میں پرس اُڑسے ایک دوسرے کی ہمت بندھا رہے تھے. میں نے ایک کو کہتے سنا ” ہول تائی نا کر جتھے توں چلاں اے اوتھےای ساریاں جانا اے”

( جلدی کس بات کی ہے جہاں تم جانا چاہتے ہو یہ سب بھی وہیں جانے کے لیے آئے ہیں) میں مسکرائی کہ یہ بھی میرے جیسے ہیں. کچھ لوگ ویل چیئر پہ بھی تھے…جن کی پھرتیاں قید کردی گئیں تھیں مگر دل اسی تیزی سے دھڑک رہا تھا کہ رب نے انکو بلایا تھا. اللہ اللہ کے امیگریشن کے پل صراط سے اترے تو سامان پہچان کر پورٹر کی نذر کرکے اپنی اپنی سواریوں میں بیٹھ کر مکہ المکرمہ کی جانب روانہ ہوئے…

فوٹوز دیکھیں: مکہّ

سڑک کی دونوں جانب سیاہ سنگلاخ پہاڑیاں تھیں جن کو دیکھ کے موسم کی سختی کا بھرپور اندازہ ہوتا تھا… نواسی کیلو میٹر کی روڈ جو ہم نے سوا گھنٹے میں طے کی اس کے اختتام پہ ایک بورڈ پہ درج دیکھا

اھلا و سھلاً لضیوف الرحمن!

( اللہ کے مہمانوں کو خوش آمدید)

دل خوشی سے جھوم اٹھا اور پچھلی رات کی تھکن جس کا احساس اب نمایاں ہونے لگا تھا اڑن چھو ہوگئ.

اب لبیک کی آواز دھڑکن کے ساتھ تیز ہوگئی تھی ٹریفک میں پھنسی سواریوں سے اتر کر دوڑ لگا کے جانے کا دل کر رہا تھا. دل کو سمجھایا کہ بس اب کچھ دیر اور…. پہاڑوں کے درمیان یہ ایک ماڈرن شہر زائرین کی سہولیات کو نظر میں رکھ کر بنایا گیا لگتا تھا جہاں چٹانوں کو کاٹ کر سرنگیں نکالی گئ تھیں کہ اس سیل ِرواں کو کم سے کم رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑے. ایسی ہی ایک سرنگ نے ہمیں ہمارے ہوٹل کے دروازے پہ اتارا. جہاں ہم نے سرعت سے چیک ان کیا اور سیدھے حرم کا رخ کیا. باب عبدالعزیز کے سامنے پہنچنا تھا کہ دل کی دھڑکن رک گئ. محرابوں کے بیچوں بیچ جو روئیت ہوئی اس نے دل کو جیسے جکڑ لیا. چشم حیرت بیساختہ اس کی جانب دیکھتی چلی گئی اور قدم ایسے لڑکھڑائے کہ آگے جانے کا یارا نہ ہو. ایک ہیبت تھی جو جسم و جاں پہ طاری تھی. جب دوسری سانس آئی تو آنکھیں دھندلا گئیں. احساس ہوا کہ حق الیقین کے پائیدان پہ کھڑی ہوں..آیت کے معانی ذہن میں گونجے کہ ” اور تیرے رب کا وعدہ سچ ہے”

دل تو چاہ رہا تھا کہ وہیں سجدے میں گر جاؤں مگر ساتھ موجود ساتھیوں کی پکار نے جھنجھوڑا…. دعا مانگو دعا مانگو…. پہلی نظرپڑنے کی گئ ہر دعا قبول ہوتی ہے…!

حواس کو یکجا کرکے دعا کرنی چاہی تو کوئی دعا یاد نہ آئی …کپکپاتے لبوں سے بے اختیار بس یہ ہی نکلا…. یا ربی… یا ربی…. یا ربی….

جاری ہے.

_________________

تحریر ،کور ڈیزائن اور فوٹوگرافی:

فرحین خالد

Advertisements

سفِر حجاز اقدس اور میں

قسط نمبر 1

( بلاوا )

__________________

میرے داورا میرے کبریا

کروں حمد تیری میں کیا بیاں

تیری منزلوں میں ہیں فاصلے

میرے راستے میں ہیں پیچ و خم

کہتے ہیں رب کے در پہ وہی حاضری دیتا ہے جس کے نام کا بلاوا بھیجا گیا ہو. مجھے بھی ادراک تھا بلکہ علم الیقین تھا کہ اس دلِ نادار کی لگن دیکھتے ہوئے میرا رب بھی مجھے اپنے در پر ضرور بلائے گا. پھر ایک روز جب امی نے فون کرکے مجھے اپنے ساتھ چلنے کا کہا تو میں نے بلا تامل حامی بھرلی کہ ایسا نایاب موقعہ پھر کب ملتا جہاں ماں کی خدمت اور اللہ کے ہاں حاضری ایک ساتھ میسر آ رہی تھی. میں نے جھٹ پٹ ٹریول ایجنٹ کو فون ملایا اور معلومات حاصل کیں اور ویزے کے لیے تمام کوائف جمع کرنے شروع کر دیے، مگر جیسے جیسے راستے کھلتے جا رہے تھے میری غیر یقینی کیفیت میں اضافہ ہوتا جا رہا تھا کہ مجھ سا گناہ گار بھی اس پاک سر زمین پہ قدم رکھ سکے گا؟ پھر جب ویزہ پاسپورٹ ٹکٹ سب ہاتھ میں آگیا تو عین الیقین سے فرط جذبات میں آنسو بھرآئے اور لگا کہ وہ گھڑی دور نہیں جب میں خدا کے گھر کو اپنی سونی ویران آنکھوں سے دیکھ سکوں گی. دل کی لگن اب بڑھ گئی تھی، جی دنیا داری سے اُچاٹ سا ہو رہا تھا… مصلے پہ بیٹھتی تو آنکھیں آسمان کی جانب اٹھ جاتیں اور دل آپ ہی آپ پینگے بڑھاتا چلا جاتا. لگ رہا تھا کہ جیسے میرے ٹوٹے رابطے جڑ گئے ہوں.. زبان تھی کہ لبیک اللھم لبیک آپ ہی آپ پکاے چلی جاتی … حمد و نعت دل میں جاری رہتی اور لبوں پہ بول پکار بن کے کچھ یوں ادا ہوتی…

وہ تنہا کون ہے… اللہُ اللہ…

بادشاہ وہ کون ہے… اللہُ اللہ

مہرباں وہ کون ہے… اللہُ اللہ

حسبی ربی جل اللہ، اللہُ اللہ

ما فی قلبی غیر اللہ، اللہُ اللہ

میں ہر چیز کو پہلے سے پلان کرنے کی عادی ہوں. ہر کام کو نک سک سے درست کرنا میری عادت ہے کہ میں نہ بھی ہوں تومیرے پیچھے کوئی معاملہ گڑ بڑ نہ ہو… مگر اس بار سفر کی نوعیت کچھ ایسی مختلف تھی کہ دل اپنی اڑان آپ اُڑا جا رہا تھا. دماغ ستاتا اپنی جانب کھینچتا تو میں منتشر خیالوں کو سمیٹ کر کاموں کو یکسوئی سے کرنے کی کوشش کرتی. ہر صبح کھڑکی پہ بیٹھا ایک پرندہ جو پیار کے گیت گنگنایا کرتا تھا اس کی لے میں اب مجھے حمد و ثنا کی لہک سنائی دینے لگی تھی جو کبھی درودِ ابراہیمی بن جاتی توکبھی درودِ تاج، میں من ہی من مُسکاتی کہ ایسی ہی ایک ترنگ میری رگوں میں بھی جاری ہے.

امی فون پہ اپنی اور باجی کی تیاریوں کا ذکر کرتیں تو مجھے بھی رہنمائی ملتی کہ رخت سفر میں کیا کیا ہونا چاہیے جو میں نے بھی رکھنے کا سوچا مگر کوئی شاپنگ نہیں کی کوئی جوڑا نہ سلوایا کہ مجھے تو درویشی کی طلب تھی. میں اپنے رب سے تزکیہ نفس کی خواستگار تھی. میں ایسی ملنگنی بن جانا چاہتی تھی جس کو دنیا وما فیھا سے کوئی شعف نہ ہو، جو اپنے مولا کے رنگ میں رنگی ہو اور اسی کے ذکر میں نہال رہے. اپنے اس جذبے کا ذکر ایک سنگی سے کیا اور کہا کہ ” تم دیکھنا کہ اس قربِ حق کے بعد میں یکسر بدل جاؤں گی.” تو وہ خوب محظوظ ہوئی شاید وہ مجھ کو مجھ سے زیادہ جانتی تھی.. بولی ” اچھا، تو یہ بتاؤ کہ واپس ٹھیک ہونے میں کتنے دن لوگی”

تو میں ایک نئے تذبذب کا شکار ہوگئی کہ خدا کے گھر کی مسافرت، دین کے شعور کی آگہی کے بعد بھی اس کا نفاذ اتنا مشکل کیوں ہوتا ہے. گناہ و ثواب کی جنگ سے آگے کی روحانیت کا حصول مجھ سے کیا قربانیاں مانگتا ہے… اس سوچ کا جواب مجھے عمیر نجمی کے اس شعر میں ملا کہ

نکال لایا ہوں ایک پنجرے سے اک پرندہ

اب اس پرندے کے دل سے پنجرہ نکالنا ہے

میں اپنے رکتے ڈگمگاتے قدموں کےساتھ تاریخِ روانگی کے قریب بڑھ رہی تھی کہ ایک واٹس ایپ میسج نے خوشگوار حیرت میں ڈال دیا. وہ میسج مجھے اس پیاری ساتھی رائٹر نبیلہ آبرو نے بھیجا تھا جس سے میرا خال خال ہی رابطہ ہوا کرتا تھا. اس نے لکھا تھا، ” رات میں نے خواب میں آپکو دیکھا کہ آپ میرے گھر میں آئی ہیں اور امی سے سبز چوڑیاں لے کے پہنی ہیں.” اتنا پیارا خواب جان کر میں بہت مطمئن ہوئی اور جواب میں یہ لکھا کہ آپ کی امی نے عنایت کی ہیں تو یقیناً یہ کسی اعزاز سے کم نہیں ہیں. ابھی اس خواب کا سحر ٹوٹا بھی نہیں تھا کہ ایک اور عزیز ترین سہیلی حمیرا فضا کا فون آیا اور اس نے بتایا کہ اس نے رات مجھے ایک خواب میں دیکھا ہے کہ وہ مکہ میں ہے جہاں مجھے ایک بڑی لوہے کی الماری تحفے میں دی گئی ہے…. کہنے لگی کہ آپ کے ساتھ ضرور کچھ اچھا ہونے والا ہے تو میں مسکرائی اور تسلیم کیا کہ واقعی تمھارا خواب سچا ہے، میں عمرے کی نیت سے جلد مکہ جانے والی ہوں.

ان باتوں سے میرے عین الیقین کو ثبات ملا کہ میرا اپنے رب کے حضور جانا لکھ دیا گیا ہے ساتھ ہی ساتھ میرے دل کی ساعتیں تیز ہوتی جا رہی تھیں میں عین الیقین کو حق الیقین میں بدلتے دیکھنا چاہتی تھی کہ جب میری نگاہیں خدا کے گھر کعبہ شریف پہ پڑیں گی اس حمد کی مصداق کہ…

کعبہ پہ پڑی جب پہلی نظر، کیا چیز ہے دنیا بھول گیا

یوں ہوش و خرد مفلوج ہوئے، دل ذوقِ تماشا بھول گیا

(جاری ہے)