بے بس

ہلکی ہلکی اداس ہوا

نیند تیری چراے گی

کوئل نے کوئ گیت بنایا

جب بلبل گانا گائےگی

تمھیں یاد ہماری آئے گی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جب اندھیری رات میں

سفر نہ کوی ختم ہوا

جب دور کہیں آسماں پر

ستارہ کوی ٹوٹ گرا

چاند پہ بیٹھی بڑھیا جب

ہلکا سا مسکرایا گی

تمھیں یاد ہماری آئے گی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دور سے دیکھ کر مسکرانا

پاس سے یونہی گزر جانا

چند قدم پھر چل کر

مسکراتے لوٹ آنا

یونہی  کوی بھولی بسری

بات ذہن میں آئے گی

تمھیں یاد ہماری آئے گی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میری یادوں سے گھبرا کر

بے معنی بات کوئ سوچو گے

ہر بات ختم گر مجھ پر ہوی

بہکے ذہن کو پھر سے روکو گے

تھک کر تم نے موند لی آنکھیں

تصویر میری ابھر آئے گی

تمھیں یاد ہماری آئے گی!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

صوفیہ کاشف

یہ بھی پڑھیں:وقت

وقت

وقت کو وقت ملے اگر،

میری دہلیز پرکچھ خواب دھرے ہیں ،

وہ جو موسموں کی شدت سے ،

یا تو گھبرا گئے ہیں یا مرجھا گئے ہیں،

وہ جو خواب اس آس پر روز جیے

روز مرتے ہیں ،

کہ

وقت کا کوئی مکمل لمحہ،

کسی کن فیکون کے طلسم کی طرح

انہیں مکمل کر دے گا،

وقت کو وقت ملے اگر،

میری دہلیز پر بھکاری بنے خوابوں کو،

اک نظر دیکھ لے ،

اور پھر ان کے نصیب کا فیصلہ فیصلہ کرلے،

کہ لمحوں کی گرانی میں،

یہ خواب مر جائیں گے،

یا پھر کسی معجزے کے ہاتھوں،

جیں گے اور امر ہو جائیں گے۔

ثوبیہ امبر

یہ بھی پڑھیں:ہلکی ہلکی اداس ہوا