“میربل شاری ___________ثروت نجیب ــــ

*************** بےتابی سے انتظار کرتی دو آنکھیں وجود کے ہر مسام میں ڈھل چکی تھیں ـ شب اپنی گہرائی پہ … More

اے عیار دلبر تھام لے ہاتھ میرا__________ثروت نجیب

” بگیر ای دلبر عیار دستم ” (اے عیار دلبر تھام لو ہاتھ میرا) “جسم کے زندان میں قید روح … More

“آخر کب تک”

(دشتِ برچی کابل کے معصوم شہداء کے نام! ) لہو سے لتھڑے بکھرے اوراق ــــ ظلم کی آنکھ مچولی میں … More