محجوب_________از ثروت نجیب

خود سے پرے ‘ خدا سے جدا ‘ رہتا ہوں پریشاں اُس گھر کے لیے ـــ
میں دن بھر جس میں رہتا ہی نہیں !!!!
شام ڈھلے ‘ شب کے سایے تلے ‘ میرا خواب پلے ـــ
جس میں ہے روشنی نئی نسل کے لیے ـ ـ ـ ـ

محجوبہ________ثروت نجیب

🌘 اک عرصہ ہوا چاند دیکھا نہیں چاندنی سے ملے مدتیں ہو گئیں شبِ سیاہ سے جا ملی بخت کی … More

  “ابوــــــ”از ثروت نجیب

💝ابو۔۔۔ ہمارے گھر کی دیوار کا وہ بیرونی حصہ تھے’ جس پہ ہر آتا جاتا جو بھی اس کے من … More

” جنگلی زیرہ”

🌺نئے گھر کے تازہ رنگ روغن دیواروں سے روشن روشن کمروں میں سب کچھ اجلا جلا تھا ـ اگر کچھ … More

“بیاہتا بیٹیوں کے دکھ”

ہتھیلی پہ وہ مہندی سے چھاپتی ہیں محبت کو رنگ چڑھے اگر چوکھا ‘ خوشی سے لوبان ہوتی ہیں ـــــ … More

“ماں ! بیٹی کے گھر مہماں “

آپ کے احساس میں شاداں نرم ہاتھوں کی حدت کو ترسی ہر ایک لمس پہ نازاں ــــ ادھوری رہ گئیں … More

” کتابوں کا احتجاج “

آج کتابوں کا عالمی دن ہے کتابیں ناقدری کا کتبہ اٹھائے افسردگی سے شیشوں سے جھانکتی کتب خانوں کی مقفل … More

“آخر کب تک”

(دشتِ برچی کابل کے معصوم شہداء کے نام! ) لہو سے لتھڑے بکھرے اوراق ــــ ظلم کی آنکھ مچولی میں … More