اعتراف___________از ثروت نجیب

💖 دلِ بیزار کو اب کوئی توقع ہی نہیں تم سے ! نہ خود سے ہے ـ ـ ـ ـ دل ٹوٹے یا عہد ٹوٹے’ یا بدبخت محبت کی ساری جدو جہد ٹوٹے میری بلا سے سب چھوٹے نہ چھوٹے بس تیرا دامن ! کہ اس دامن سے الفت ہے وہی الفت جو پروانہ کسی […]

Read More…

محجوب_________از ثروت نجیب

خود سے پرے ‘ خدا سے جدا ‘ رہتا ہوں پریشاں اُس گھر کے لیے ـــ
میں دن بھر جس میں رہتا ہی نہیں !!!!
شام ڈھلے ‘ شب کے سایے تلے ‘ میرا خواب پلے ـــ
جس میں ہے روشنی نئی نسل کے لیے ـ ـ ـ ـ

Read More…

محجوبہ________ثروت نجیب

🌘 اک عرصہ ہوا چاند دیکھا نہیں چاندنی سے ملے مدتیں ہو گئیں شبِ سیاہ سے جا ملی بخت کی تیرگی کیا سجتی ہے اب بھی آسماں کی تاروں سے جبیں؟ کچھ تو کہو میرے صیاد جی !!!! اس قفس سے باہر کیا دنیا اب بھی ہے حسیں کیا سورج اگتا ہے اب بھی کنواری […]

Read More…

  “ابوــــــ”از ثروت نجیب

💝ابو۔۔۔ ہمارے گھر کی دیوار کا وہ بیرونی حصہ تھے’ جس پہ ہر آتا جاتا جو بھی اس کے من میں آتا ! لکھ جاتا ــــ وہ سہہ جاتے ‘ چپ رہ جاتے جب سے وہ دیوار گری ہے عیاں ہے سارے گھر کا منظر کیا باہر اور کیا اندر ــــ دیوار سے لپٹی کاسنی […]

Read More…

” جنگلی زیرہ”

🌺نئے گھر کے تازہ رنگ روغن دیواروں سے روشن روشن کمروں میں سب کچھ اجلا جلا تھا ـ اگر کچھ آنکھوں میں کھٹک رہا تھا تو وہ تھے بابا آدم کے زمانے کے بنے ہوئے دوشک ـ وہ بھاری بھرکم ‘ بوسیدہ دوشک جن کے سرخ مخملی غلاف بھی ان پہ جچنے سے انکاری تھے […]

Read More…

نظم

جگنو جگنو راہیں کر دوں حلقہ حلقہ باہیں کر دوں روشن روشن پیشانی پہ خوشحالی کا غازہ بھر دوں لب پہ تیرے سجا کے نغمے رقصاں امبر دھرتی کر دوں عشق ہی میرا سرمایہ ہے تو دل مانگے’ جاں میں سر دوں دنیا محبس ہے تیرے بن الجھا الجھا لگتا ہے گردوں تارہ تارہ شامیں […]

Read More…

“بیاہتا بیٹیوں کے دکھ”

ہتھیلی پہ وہ مہندی سے چھاپتی ہیں محبت کو رنگ چڑھے اگر چوکھا ‘ خوشی سے لوبان ہوتی ہیں ـــــ جو پھیکا پڑ جائے کبھی کاجل ‘ گھل گھل کے اشکوں سے چھپا لیتی ہیں آنچل میں’ بتاتی ہی نہیں آخر ! دکھ کیا ہے ان آنکھوں میں ؟ ہزار پوچھو مگر چپ ‘ مقفل […]

Read More…