“میربل شاری ___________ثروت نجیب ــــ

*************** بےتابی سے انتظار کرتی دو آنکھیں وجود کے ہر مسام میں ڈھل چکی تھیں ـ شب اپنی گہرائی پہ … More

اے عیار دلبر تھام لے ہاتھ میرا__________ثروت نجیب

” بگیر ای دلبر عیار دستم ” (اے عیار دلبر تھام لو ہاتھ میرا) “جسم کے زندان میں قید روح … More

سروجنی_______محمد ہاشم خان

’گیہوں کی بالیاں کچھ زیادہ بڑی ہونےلگی ہیں ، ۔’’ہاں اورپگڈنڈیاں اب سکڑ گئی ہیں۔ دو لوگ ایک ساتھ نہیں … More

“جادوگر”__________ثروت نجیب

مجھے پشاور سے بسلسلہ روزگار مسقط آئے چند دن ہی ہوئے تھے ـ ہمیں ایک جزیرے پہ جہاں سمندر سے … More

کہانیوں سے پرے _____________محمد ہاشم خان،

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تصویر کے عقب میں تحریرشدہ عبارت پڑھنے کے بعد میرے اوسان خطاہوگئے ۔ تاریخ پرنظرپڑی تو حواس معطل ہوگئے،گویا … More

” جنگلی زیرہ”

🌺نئے گھر کے تازہ رنگ روغن دیواروں سے روشن روشن کمروں میں سب کچھ اجلا جلا تھا ـ اگر کچھ … More

خاطرہ_______ثروت نجیب

خانہ جنگی کے دوران دگرگوں حالات کے ایک ریلے میں خاطرہ بھی اپنا بوریا بستر سمیٹے کابل جان کی گلیوں کو آبدیدہ آنکھوں سے رخصت کر کے پشاور پہنچی تو بے سروسامانی ‘ لامکانی اور مجبوری کے عالم میں ہجرت ‘ کلنک کی طرح اس کے ماتھے پہ شناختی نشان بن گئی