وہ اِک لمحہ سجدے کا_______عمر

جیون کی اُس بھاگم دوڑ کے سب لمحوں میں
دُنیا کے اُن سرپٹ دوڑتے دِن راتوں میں
وہ اِک پل تھا تیری راہ میں رُکنے کا !
قطرہ قطرہ آنسو آنسو
اِک بھیگے کشکول کو لے کر
تیرے در پر جُھکنے کا !
گُھپ اندھیروں میں جب آنکھیں
سورج کی کِرنوں کو ترسیں
اپنے آسیبوں کے سائے
درد اور زخمِ اذیت بانٹیں
فِکر و رنج و مصیبت برسیں

ایسے میں ہر ٹُوٹتا جیون
جی لے لمحہ آشا کا
ایسے میں ہر بھٹکا راہی
پا لے اِک پل سجدے کا……

_____________

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.