سامان بھجوا دو__________ گلزار

اِک دفعہ وہ یاد ھے تم کو ؟؟
بِن بتی جب سائیکل کا چالان ھُوا تھا
ھم نے کیسے بھوکے، پیاسے
بے چاروں سی ایکٹنگ کی تھی ؟؟
حوالدار نے اُلٹا ایک اٹھنی دے کر ، چھوڑ دیا تھا

ایک چوّنی میری تھی ، وہ بِجھوا دو۔
اور بھی کچھ ساماں تمہارے پاس پڑا ھے
وہ بجھوا دو.

پت جھڑ ھے ، پت جھڑ میں
کچھ پتوں کے گرنے کی آھٹ
کانوں میں اِک بار پہن کر ، لوٹ آئی تھی
پت جھڑ کی وہ شاخ ابھی تک ، کانپ رھی ھے

وہ شاخ گرا دو
اور بھی کچھ سامان تمہارے پاس پڑا ھے

ایک سو سولہ چاند کی راتیں
ایک تمہارے کاندھے کا تِل
گیلی مہندی کی خوشبُو
جُھوٹ مُوٹ کے شکوے کچھ
جُھوٹ مُوٹ کے وعدے بھی سب ،یاد کرا دوں

سب بھجوا دو
اور بھی کچھ ساماں تمہارے پاس پڑا ھے

ایک اکیلی چھتری میں جب
آدھے آدھے بھیگ رھے تھے
آدھے سُوکھے ، آدھے گیلے
سُوکھا تو میں‌ لے آئی تھی
گیلا من شاید بستر کے پاس پڑا ھو

وہ بھجوا دو
اور بھی کچھ ساماں تمہارے پاس پڑا ھے.

ایک اجازت دے دو بس
میں جب اِس کو دفناؤں گی
میں بھی وھیں سو جاؤں گی.
میں بھی وھیں…….. سو جاوں گی.

”گلزار“

__________

کور ڈیزائن:صوفیہ کاشف

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.