“ہمیں تتلیوں کے دیس جانا ہے”______________صوفیہ کاشف

“ہمیں تتلیوں کے دیس جانا ہے”

ننھے آنگن کی حدوں سے ادھر

روٹھی ہنسی ،جھلملاتی آنکھوں سے

پھولوں سی مسکراہٹ

خوشبو سی سانسوں کے ساتھ

ممتا کے میٹھے لمس سے نکل کر

بابا کی محفوظ گود سے اتر کر

ہمیں تتلیوں کے دیس جانا ہے!

جہاں کوئ دکھ نہ ہو ،کوئ درد نہ ہو

نشتر نہ ہو کوئ،کہیں زہر نہ ہو

دلنشیں چہروں میں بھیڑئیے نہ ہوں

بلبلاےی ہوئ جہاں کوئ سحر نہ ہو!

مسیحائی کے روپ میں عفریت نہ ہوں

الجھی ہوئی تقدیر نہ ہو،

مرجھایا ہوا نصیب نہ ہو!

کوڑے کے ڈھیر پر جہاں پھول نہ ملیں

کلیوں کو نوچتے عفریت نہ ہوں!

ذائقوں میں لپٹی موت نہ ملے،

سڑکوں پہ بکھرتی جانیں نہ پائیں!

کتابوں میں لپٹی قبر نہ ملے!

لہو رنگ بھیگی خبر نہ ملے!

ذندگی کے ترانے سبھی گنگنائیں!

خوشبو کا پالیں،کلیاں بچائیں!

ہر سمت مسکراہٹوں، محبتوں کا بسیرا ہو

جس دیس میں ہر سویرا ،اجلا سویرا ہو!

جہاں پرندے چہچاتے ہوں

بلبلوں کے نغمے ہوں

اور چشمے پاس بلاتے ہوں!

ندیاں ہوں سب شہد سی

جھلملاتے کنارے ہوں

حیات کے سُر اٹھاتے

سب کے سب ہمارے ہو !

کہکشاں رہگزر ہو

مسکراتا ہر سفر ہو!

خواب ہوں سب روشن روشن

جہاں چلتی ہوں مہکی پون

دیکھے نہ تھے ابھی میری آنکھوں نے

مجھے ان سپنوں کے دیس جانا ہے

جگنوؤں کے نگر

ہمیں تتلیوں کے دیس جانا ہے!

_______________

صوفیہ کاشف

ڈاکٹروں کی غفلت سے وفات پانے والی ایک بچی رمشہ کے لئے 1999 میں لکھی گئی ایک نظم

ابوظہبی

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.