الماری میں رکھا یاد کا سوئٹر_______احمد نعیم

آج یاد کی الماری سے
اُس کے ہاتھوں سے بُنا وہ سوئٹر نکلا
جو اُس نے
اُس سردی میں
نظم کہتے کہتے
بُنا تھا
جب محبت سرد نہیں تھی
اس نے دھاگوں سے عین اسی جگہ
دل کی شکل بنائی تھی
جہاں میرا دل دھڑکتا تھا
آج کی گلابی سردی میں
اُس کی انگلیوں کا لمس
میں اپنے دل کے قریب محسوس
کر رہا ہوں
لیکن وہ نظم اور محبت دونوں سرد پڑ چکی ہیں

احمد نعیم

1 Comment

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.