دل کا چین _________ جلال الدین رومی

ایک انسان میں اس قدر محبت،جزبہ،چاہت،خواہش،اور حسرت ہوتی ہے کہ اسے لاکھوں دنیائیں بھی دے دی جائیں تو اس کے دل کو چین نہیں ملتا۔لوگ ہزاروں طرح کے روزگار اور کاروبار اپناتے ہیں،سائنس اور میڈیکل سیکھتے ہیں،لیکن ان کو پھر بھی چین نہیں ملتا کیونکہ ان کے دل کی طلب ادھوری رہتی ہے۔محبوب کو “دل آرام” اسی لئے تو کہتے ہیں کہ ان کو پا کر دل کو چین مل جاتا ہے۔پھر یہ سکون کہیں اور سے نہیں مل پاتا!

یہ طلب اور خواہشات دراصل ایک سیڑھی ہیں،اور سیڑھی کے پائے پر پاؤں دھر کر آگے گزر جایا جاتا ہے ان پر بیٹھا نہیں جاتا۔انسان جتنی جلدی یہ بات سمجھ جائے اتنا جلدی رستہ کھلتا چلا جاتا ہےاور انسان سیڑھی پر وقت ضائع کرنے سے بچ جاتا ہے۔

____________

کتاب:فیہ ما فیہ

ترجمہ و فوٹوگرافی:صوفیہ کاشف

2 Comments

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.