ہر ظلم ترا یاد ہے، بھولا تو نہیں ہوں
اے وعدہ فراموش میں تجھ سا تو نہیں ہوں

ساحل پہ کھڑے ہو تمہیں کیا غم، چلے جانا
میں ڈوب رہا ہوں، ابھی ڈوبا تو نہیں ہوں

چپ چاپ سہی مصلحتاَ وقت کےہاتھوں
مجبور سہی وقت سے ہارا تو نہیں ہوں

مضطرؔ کیوں مجھے دیکھتا رہتا ہے زمانہ
دیوانہ سہی، اُن کا تماشا تو نہیں ہوں

(آفتاب مضطر)

My sun Cap 🧢
Last day in pakistan.pack up!
My daughter….last day in her room
My son ,,,for whom leaving his room was a trauma
Daughter’s couch
View
بارشیں بھی تم سی ہیں۔۔۔
Daughter’s place
گلی میں آج چاند نکلا
سفر در سفر
زاد راہ
خزاں