وقت بے رحم__________ا،ز


خط میں لکھ کے پوچھا ہے۔

کیا اب بھی اتنا ہنستی ہو؟

اب بھی اتنا سجتی ہو؟

اب بھی دل گھر آنگن میں

کیا روز نیۓ پھول اگاتی ہو؟

اب بھی آنکھوں کو کاجل سےکیا

روز کٸ چاند لگاتی ہو؟

اب بھی سرخی ہونٹوں کی

گلابوں کو شرماتی ہے؟

اب بھی مہندی ہاتھوں کی

خزاں میں بہار کھلاتی ہے؟

کیااب بھی آینے کے سامنےخود

اپنی ہی نظر اتارتی ہو؟
اب بھی نگینے بالیوں کے

ہر اک پہ قیامت ڈھاتے ہیں؟

کیا اب بھی ویسی کی ویسی ہو؟

کیا اب بھی چاندنی جیسی ہو؟

کیا اب بھی خوشبوٶں میں بستی ہو؟

کیا اب بھی کسی کی آنکھوں کی

تپش صحرا میں ٹھنڈک ہو؟

کٸ دن کٸ شامیں گزر گیٸں۔۔۔

اب خط کا جواب میں آیا ہے۔۔۔

بس دو بال سفید لایا ہے!!!!

—————
کلام:الف_زرعون

کور ڈیزائن و فوٹو گرافی: قدسیہ،صوفیہ

ماڈل: ماہم

4 Comments

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.