(ان لوگوں کے نام جو شرعی پردے کو رشتوں میں رکاوٹ سمجھتے ہیں )
24 سال میرا نام اس شخص کے ساتھ جڑا رہا جس نے ایک پل میں سب ختم کردیا یہ کہہ کر کے میں ایسی لڑکی سے شادی نہیں کرسکتا جو میرے بھائی سے بہنوئی سے پردہ کرے خالہ جو بچپن سے اپنا ہونے کا احساس دلاتی تھیں خالو جو ہمیشہ مجھے مان دیتے تھے انہوں نے بھی کہہ دیا شرعی پردہ رشتوں میں رکاوٹ ہے میری بچپن کی دوست میرے دل کے حال سے واقف میری خالہ ذاد بین بھی انجان بن گئی اور اپنے بھائی کی ہمیں بتائے بغیر چپکے سے کہیں اور منگنی کر آئے 
ہاں صرف اسی وجہ سے کہ میں نے شرعی پردہ شروع کردیا تھا 
اس دن اماں کو روتے دیکھ کر میں بھی اندر سے کٹ گئی ٹھکرائے جانے کا احساس جان لیے جارہا تھا پر میں گم صم سی سب سہے جارہی تھی میں نہیں چاہتی تھی کسی کو احساس ہو کے مجھے تکلیف ہوئی ہے اسی خیال کو سوچتے ان کو مبارک دینے چلی گئی خیر مقدم جن الفاظوں سے ہوا وہ یہ تھا کہ “ماشاءاللہ ہم ہیرا لیکر آئے ہیں ہمیں ہیرا مل گیا ” دھتکارے جانے کا احساس زور پکڑتا جارہا تھا دھیرے دھیرے یوں لگ رہا تھا جیسے صوفے میں دھنستی جارہی ہوں جیسے ہی گھر پہنچی اسکارف آنسووں سے تر ہوچکا تھا کانپتے ہاتھوں سے اپنے مضبوط سہارے (قرآن) کو تھاما دل سے دعا نکلی اللھم یسرلی جلیسا صلیحا اس دن میں نے یہ آیت پڑھی تھی  6 : سورة الأنعام 33
قَدۡ نَعۡلَمُ  اِنَّہٗ  لَیَحۡزُنُکَ الَّذِیۡ یَقُوۡلُوۡنَ فَاِنَّہُمۡ لَا یُکَذِّبُوۡنَکَ وَ لٰکِنَّ الظّٰلِمِیۡنَ  بِاٰیٰتِ  اللّٰہِ  یَجۡحَدُوۡنَ ﴿۳۳﴾
ہمیں معلوم ہے کہ یہ لوگ جو باتیں کرتے ہیں وہ بے شک آپ کو رنج پہنچاتی ہیں ۔ ( لیکن امر واقع یہ ہے کہ ) یہ لوگ آپ کو نہیں جھٹلاتے بلکہ یہ ظالم لوگ ( دراصل ) اللہ کی آیتوں کا انکار کر رہے ہیں ۔ 
میں نے تو اللہ کا حکم مانا تھا اسی کے لئے پردہ کیا تھا میرے مستقبل کی حفاظت فرمانے والے بھی وہی ہے Surat No 93 : Ayat No 5 
سورت الضحی پڑھتے ہمیشہ میرا دل تشکر سے لبریز  ہوجاتا تھا
وَ  لَسَوۡفَ یُعۡطِیۡکَ رَبُّکَ فَتَرۡضٰی ؕ﴿۵﴾
 اور عنقریب تمہارا رب تم کو اتنا دے گا کہ تم خوش ہو جاؤ گے5 ۔   جس ک مفہوم مجھے دو سال بعد پتا لگ گیا جب میں متقیوں کے امام خوبصورت پرہیز گار شخص کی زوجیت میں آئی جس کی وجہ میرا پردہ ہی تھا اللہ نے مجھے نیک شوہر عطاء فرمایا صراط مستقیم پر چلنے والے خاندان کا حصہ بنایا وہ خاندان جس پے لوگ رشک کرتے ہیں الحمداللہ آج میں اور میرا شوہر درس و تدریس کا کام کررہے ہیں اور ڈاکٹری کے شعبے سے بھی منسلک ہیں اللہ نے اتنا محبت کرنے والا شوہر ماں باپ سے بھی بڑھ کر محبت کرنے والے ساس سسر عطاء فرمائے ہیں جن کی محبتوں نے پچھلے سارے غم بھلادیئے ہیں  بھلا میرا اللہ مجھے ان لوگوں میں کیوں شامل ہونے دیتا جو میری ناقدری کرتے ؟

___________

تحریر:خذائمہ بنت محمد

کور و فوٹوگرافی: صوفیہ کاشف