چاند رات کو
   ساری لڑکیاں میری سکھیاں
  مہندی سے ھاتھ سجا ئیں گی
   گوری گوری بانہوں میں
   ست رنگی چوڑیاں چڑھائیں گی
   پھر محبتوں کے خمار میں
  صبح عید کے انتظار میں
  سپنوں میں کھو جائیں گی
  جب سحر کا اجالا ہو گا
  اک نیا سویرا ہو گا
  رنگ برنگے پیرہن ہوں گے
  ھاتھوں میں بجتے کنگن ہوں گے
  وہ امنگوں سے سج رہی ہوں گی
  تب میں اپنی سونی کلائیاں
  اور بے رنگے ہاتھ دیکھ کر سوچوں گی
   جب تم آ جاؤ گے ساجن
  میں بھی عید مناؤں گی
  تیرے نام کی مہندی سے
  ھاتھ اپنے سجاؤں گی ۔

_____________
                       کلام۔ شازیہ ستار نایاب

کور ڈیزائن اینڈ فوٹوگرافی: صوفیہ کاشف