سفر آساں نہیں ہوتا________حجاب قاضی

شناسی کا سفر،
آساں نہیں ہوتا…
یہ خود سے ہو
خدا سے ہو،
فنا سے ہو،
بقا سے ہو..
مگر یہ
جان کر رکھو…
کہ یہ رستہ
کبھی دشت بیاباں
بھی نہیں ہوتا…
تمہیں اس راستے
میں بستیء دل،
ہستیء دل،
درد کی منزل..
یہ سب کچھ
دیکھنا ہوگا..
مگر رکنا نہیں ہوگا..
کہ رکنا تو سفر کے
واسطے..
سامان وحشت ہے،
کہ رکنا ایک دہشت ہے..
تمہیں پانا ہے
گر خود کو،
خدا کو تو،
بھلے کوئ
حریمِ جاں کو
چکنا چور ہی کر دے..
تمہیں رنجور ہی کردے
تمہارے دل کے گوشوں کو
شبِ دیجور ہی کردے..
تمہیں چلتے ہی جانا ہے..
سفر کرتے ہی جانا ہے..
سفر کرنا ضروری ہے!!

عمارہ احمد (حجاب)

____________

کور ڈیزائن و فوٹوگرافی: صوفیہ کاشف

5 Comments

  1. اس جہاں سفر جاری و ساری رکھنا ہے جہاں بھی رکے تو فنا ہو جاوگے اس کے لئے خو شناس ہونا انتہائی ضروری ہے کیونکہ یہ جہاں تاریکی اور اندھیرے کی مانند ہے اور خود شنادی ٹارچ کا کام کرتی ہے۔۔ اکثر مجھے خیال آتا ہے کہ پیغمبر شاید خود شناس تھے اس لئے انہوں نے منزل کا تعین کرلیا تھا اور باقی دنیا کتنی ہیں جو بے آواز ہوتے ہیں نابینا ہوتے ہیں۔۔ شاید وہ لوگ خدا کے نس بینا ہو پر دنیا میں آتے ہے اور چلے جاتے ہیں

    Liked by 2 people

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.