ایدھی————-طیبہ صباحت

صاحبِ خوش خصال تھا ایدھی

آپ اپنی مثال تھا ایدھی

دورِ ظلمت کی ہولناکی میں

ایک روشن ہلال تھا ایدھی

قوم کی بے بسی پہ ہر لمحہ

ہر گھڑی پر ملال تھا ایدھی

درس انسانیت کا دیتا تھا

تحفہِ ذوالجلال تھا ایدھی

جن کو دھتکارتے رہے اپنے

ا ن کا پرسانِ حال تھا ایدھی

جو ہواؤں کا رخ بدلتا تھا

وہ شجر با کمال تھا ایدھی

ظلم سہتے ہوئے شکستہ پا

خستہ حالوں کی ڈھال تھا ایدھی

جاتے جاتے بھی روشنی دے دی

گوہرِ لازوال تھا ایدھی

آہ!! محروم ہو گئی دنیا

اس کا حسن و جمال تھا ایدھی

جیسے ماؤں کے لعل ہوتے ہیں

میری دھرتی کا لعل تھا ایدھی

____________

کلام: طیبہ صباحت

5 Comments

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.