“جب لمحوں نے خطا کی”__________خزائمہ بنت محمد


رات کا پچھلا پہر میرے لئے کہرام بن کر ٹوٹا تھا ۔۔۔میرے کانوں میں بابا کی سسکیاں بھرتی آوازیں جیسے سیسہ گھول رہی تھیں ۔۔اور میں۔۔۔ندامت کے آنسوؤں بہاتی کہیں دور ماضی کی طرف لوٹ گئی ۔۔دور بھت دور ۔۔۔     ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   میں والدین کی سب سے لاڈلی اولاد تھی ۔۔پورے خاندان میں میری مثال دی جاتی تھی ۔۔۔تعلیمی قابلیت تو شروع سے ہی شاندار تھی جس کی وجہ سے اساتذہ کی آنکھوں کا بھی تارا بنی ہوئی تھی ۔۔۔یہ ان دنوں کی بات ہے جب میرا داخلہ یونیورسٹی میں ہوا ۔۔۔اور پھر جیسے سب بدلتا ہی گیا ۔۔مجھے ہمیشہ سے ہی بھت برا لگتا تھا ۔۔دو نامحرموں کی گفتگو۔۔ہنسنا ۔۔باتیں کرنا ۔۔۔اور اس کا اظہار میں کلاس میں بھی کردیتی تھی ۔۔۔جس کی وجہ سے کئی باتیں بھی سننے کو ملتی تھی ۔۔میں جانتی تھی کہ میں نے اپنے والدین کا مان رکھنا ہے ۔۔پر ۔۔میں یہ بھول گئی کہ مجھے آخر وہ مان کس طرح رکھنا ہے ۔۔ ؟؟ اور یہی سے شیطانی وار شروع ہوگئے ۔۔۔اور مجھے بھی نفاق(دل کی بیماری) کی بیماری لگ گئی ۔۔جب سے میری دوستوں نے مجھے اس کے متعلق بتایا کہ وہ مجھے پسند کرنے لگا ہے ۔۔۔شروع میں تو مجھے شدید غصہ آیا پر ۔۔آہستہ آہستہ میرا غصہ محبت میں بدلتا گیا اور میں کئی خواب بننے لگی۔۔۔۔اس سے بات کرنے لگی ۔۔پر ۔۔۔میں اللہ کے حکم اور والدین کے مان کو کہیں دور رکھ کر منہ موڑ گئی ۔۔۔پر اللہ نے تو مجھے اصلیت دیکھانی تھی نا ہر رشتے کی ۔۔۔اور مجھے کچھ دنوں میں ہی اصلیت معلوم ہوگئی ۔۔۔میں اس دن چھٹی پر تھی ۔۔پر اچانک میرا موڈ یونیورسٹی جانے کا بن گیا ۔۔شاید اللہ نے مجھے کچھ دیکھانا تھا ۔۔۔اور واقعی اللہ نے دکھادیا کہ میں کس راہ پر چل رہی تھی ۔۔۔میں سرپرائز دینے کے چکر میں جیسے ہی گراونڈ میں پہنچی وہ مجھ سے محبت کے دعوے کرنے والا میری ہی کچھ دوستوں کے ساتھ مل کر مجھ پر ۔۔ میرے احساسات پر ہنس رہا تھا ۔۔۔مذاق اڑا رہا تھا ۔۔کہ کس طرح وہ میرے “مغرور رویے” کو سبق سیکھانے کے لئے جھوٹے من گھڑت جذبات آشکار کرتا رہا ۔۔ہاں وہی وقت تھا ۔۔۔جب مجھے سمجھ آگئی کہ آخر آسمان کیسے گرتا ہے سر پر ۔۔۔ میں ٹوٹے وجود کو سنبھالتی گھر واپس لوٹ گئی ۔۔۔اور آخری بار ٹوٹ کرروئی ۔۔میں نے تب سے ہی عہد کرلیا۔۔۔مجھے ایسے ہی دوست بنانے ہیں جو مجھے اللہ کی طرف سے احکامات کی یادہانی کروائیں ۔۔مخلصی دیکھائیں ۔۔اور پھر آج ۔۔۔ رات کے اس پہر اپنے بابا کی ٹوٹی ہوئی آواز پھر سے جھنجھوڑ گئی جب وہ اللہ سے بیٹیوں کی عزت کی حفاظت کی دعا کررہے تھے ۔۔۔ہاں یہ انہی کی دعاوں کا ہی اثر تھا ۔۔جس نے برے وقت سے پہلے ہی مجھے بچا لیا تھا ۔۔۔ہاں ۔۔۔یہ میرے والدین کی دعائیں ہی تھیں ۔۔شکر الحمداللہ

___________
✒ خذائمہ بنت محمد

📸⁦👨‍🎨⁩ صوفیہ کاشف

1 Comment

  1. مجھے ایسے ہی دوست بنانے ہیں جو مجھے اللہ کی طرف سے احکامات کی یادہانی کروائیں ۔

    Khoobsoorat.

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.