عشق محشر سی ادا رکھتا ہے(7)_______حمیرا فضا

مصنفہ: حمیرا فضا

کور ڈیزائن:ثروت نجیب

ساتویں قسط

______

ابھی آنکھیں کھلی ہیں اور کیا کیا دیکھنے کو

مجھے پاگل کیا اُس نے تماشا دیکھنے کو

جس محبت پر یقین ہو کہ وہ ہر لمحہ پھول برسائے گی ، وہ کانٹے اُگلتی ہے تو آنکھیں کھلتی ہیں۔۔۔

جس محبت پر بھرم ہو کہ وہ سائباں کے جیسے گھنا سایہ عطا کرے گی ، وہ تپتپاتی دھوپ میں لاکھڑا کرتی ہے تو آنکھیں کھلتی ہیں۔۔۔

جس محبت پر اعتبار ہو کہ وہ چادر کی طرح پورے تن کو ڈھانپے رکھے گی ، وہ بھری محفل میں برہنہ کرتی ہے تو آنکھیں کھلتی ہیں۔۔۔

جس محبت پر اعتماد ہو کہ وہ محافظ بن کر ساتھ چلے گی، وہ رہزن بنتی ہے تو آنکھیں کھلتی ہیں۔۔۔

جس محبت سے امید ہو ہر وعدے کی پاس داری کی ، وہ ہر وعدے کو جھٹلاتی ہے تو آنکھیں کھلتی ہیں۔۔۔

جس محبت سے خوش گمانی ہو بس خوشیوں کی بشارت کی، وہ غم کا سندیسا لاتی ہے تو آنکھیں کھلتی ہیں۔۔۔

جس محبت پر فخر ہو اپنے آپ سے زیادہ مان ہو ،وہ جب سر کو جھکاتی ہے تو آنکھیں کھلتی ہیں۔۔۔

فریب کی دنیا میں آنکھوں کا بند ہونا ہر شئے کو کتنا خوبصورت دیکھاتا ہے اور جب یہی آنکھیں کھلتی ہیں تو ہر طرف بد صورتی کا نظارہ زندگی سے بھی خوفزدہ کر دیتا ہے۔زندگی کی بدصورتیاں دیکھنے کی گھڑی آن پہنچی تھی ،زندگی سے خوفزدہ ہونے کا وقت آگیا تھا۔اِرد گرد لگے سارے پھول خار بن کر اُسے نیچا دیکھانے لگے تھے تو حویلی کی بلند و بالا رنگین دیواریں اُس کی بے قدری پر ہنس پڑی تھیں۔چاروں اُور کھڑے لوگوں نے تمسخرانہ انداز میں تالیاں بجائی تھیں تو ماتھے کے جھومر ،گلے کے ہار اور ہاتھوں کی چوڑیوں نے اُس کے وجود کو کاٹنا شروع کردیا تھا ۔ہر چیز کہہ رہی تھی ہر شئے بول رہی تھی۔

’’دیکھ جیون!

یہ ہے جازم ۔۔۔

یہ ہے اعتبار۔۔۔۔۔

اور یہ ہے عشق۔۔۔

ہائے عشق۔۔۔‘‘

اِس عشق کی لذتوں کے لیے اُس نے اپنی آبرو کو مٹی کیا تھا کہ ایک دن اُس کا یہ عشق اُسے سونا بنا دے گا ،مگر وہ تو پیتل سے بھی کم قیمت کی رہ گئی تھی۔جس جنت کا خیال اُسے عشق کے محشر تک لے آیا تھا اُس عشق نے ہی اُسے بتا دیا، دیکھا دیا کہ یہ عشق نہیں۔۔۔غلطی ہے۔۔۔جرم ہے ۔۔۔پاپ ہے ،اور گناہوں کے عوض جنت نہیں دوزخ ملا کرتی ہے۔

وہ صدمے سے کانپتی کچھ قدم پیچھے ہٹی ۔محبت میں دو لمحے بڑے ہی نازک ہوتے ہیں اعتبار اور بے اعتباری کے۔جب اِس محبت پر اعتبار ہوتا ہے تو پاؤں زمین پر نہیں ٹکتے اور جب یہ محبت بے اعتباری ہوجائے تو زمین پاؤں کے نیچے نہیں سماتی ۔اُڑتا اُڑتا انسان شدت سے پٹخ دیا جاتا ہے اور وہ نیچے نہیں گرتا ایک گڑھے میں گرتا ہے، ایک ایسا گڑھا جو عاشق خود کھودتے ہیں جہاں اُن سمیت اُن کی عزت، وعدے ، وفائیں دفن ہوجاتی ہیں۔اُس کے ساتھ بھی تو ایسا ہی ہوا تھا ۔کچھ دیر پہلے وہ گیت گاتی ہوا میں اُڑ رہی تھی اور پھر چند ہی لمحوں میں زندگی اور خوشی کا سُر بگڑ گیا تھا ، ہر تار ٹوٹ چکی تھی۔وہ صرف زمین پر گری نہیں تھی زمین کے اند ر دھنس گئی تھی۔اُسے اپنا سانس گھٹتا ہوا محسوس ہو رہا تھا ۔اُس نے شدت سے خواہش کی کہ ذلت کی ساری مٹی ایک ہی بار اُنڈیل دی جائے اور وہ ہر سانس ہار دے ۔اُسے اُس لمحے زندگی سے نفرت محسوس ہوئی کیونکہ زندگی سے پیارے شخص نے اُس کا تماشا بنا دیا تھا۔اُس نے خالی خالی نظروں سے جازم کو دیکھا یہی وہ انسان تھا جس کے سنگ وہ زندگی گزارنا چاہتی تھی اور اُسی نے ہی اُسے جیتے جی مار ڈالا تھا۔

’’جازم تم ہوش میں تو ہو؟ یہ کیسی بہکی بہکی باتیں کر رہے ہو۔آج تمھارا نکاح ہے جیون سے ،سیف کا نہیں۔‘‘ ذکیہ بیگم معاملے کی سنگینی کو دیکھتے ہوئے آگے بڑھیں اور آہستہ آواز میں جازم کو ڈانٹنے لگیں۔

’’میں ہوش میں ہوں امّی جان۔۔۔اِس بیچارے نوکر نے بہت مار کھائی ہے اِسے کوئی انعام ملنا ہی چاہیے ، اِس بد بخت کے لیے جیون سے اچھا کیا انعام ہوگا، اور ویسے بھی جیون کی خواہش تھی کہ اُس کی جلد سے جلد شادی ہو۔میں اُس کی خواہش ہی پوری کر رہا ہوں۔‘‘ جازم نے کسی کی پرواہ نہ کرتے ہوئے بلند آواز میں قہقہہ لگا کر کہا تھا۔جیون نے آنسوؤں سے بھری آنکھیں جھکا لیں۔وہ سر تا پیر شرمندگی کے سمندر میں ڈوب چکی تھی ۔اُس کی محبت اور خواہش کا اِتنا بیہودہ مذاق بنایا جائے گا اُس نے کبھی خواب میں بھی نہیں سوچا تھا۔

’’شراب پی کر تم میرا اور اپنی عزت کا تماشا بنا رہے ہو ۔سب لوگ ہمیں دیکھ رہے ہیں۔حویلی کی آن بان کا کچھ لحاظ کرو۔چھوڑو اِس نوکر کا گریبان اور جاکر جیون کا ہاتھ پکڑو۔‘‘ ذکیہ بیگم کی آواز دھیمی مگر لہجہ تحکم بھرا تھا۔

’’گستاخی معاف امّی جان! چاہے تماشا لگے یا آن بان سولی پر لٹک جائے ، آج نکاح تو سیف اور جیون کا ہی ہوگا۔‘‘ جازم نے ذکیہ بیگم کا حکم رد کرتے ہوئے اُنھی کے انداز میں گرد ن اکڑا کر جواب دیا تھا۔

’’تم اِس وقت نشے میں اپنی سمجھ بوجھ کھو چکے ہو ،اگر تم یہ شادی نہیں کرنا چاہتے تو چلے جاؤ یہاں سے ۔میں سب سنبھال لونگی۔‘‘ ذکیہ بیگم اُس کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر سرگوشی میں بولیں۔اُن کا انداز تنبیہہ کرنے والا تھا۔

’’شش۔۔۔شش۔۔۔کوئی سن لے گا کہ ہم کیا بات کر رہے ہیں۔‘‘ وہ شیطانیت سے ہنسا اور متواتر ہنستا چلا گیا۔ذکیہ بیگم نے اُسے بے بسی اور افسوس سے دیکھا وہ سمجھ گئی تھیں کہ اِس حالت میں اُسے کچھ بھی سمجھانا ناممکن ہے۔ایک طرف بے عزتی کی خفت تھی تو دوسری طرف اُلجھن کا عالم کہ جازم کیوں اور کس لیے یہ کر رہا ہے۔

’’جاؤ سیف بیٹھ جاؤ اُس بڑی کرسی پر اور تم جیون۔۔۔۔۔‘‘ جازم نے سیف کا گریبان چھوڑ کر مڑ کے دیکھا تو اُس کے الفاظ منہ میں ہی رہ گئے۔جیون اپنی جگہ پر نہیں تھی ،وہ اُسے دور سے ہی حویلی کے داخلی دروازے کی طرف بھاگتی ہوئی نظر آئی۔

’’جیون۔۔۔جیون۔۔۔رک جاؤ جیون۔۔۔میں کہتا ہوں رک جاؤ۔‘‘ وہ پاگلوں کی طرح چلاتا ہوا اُس کے پیچھے دوڑ پڑا ۔

’’جیون۔۔۔جیون۔۔۔جیون۔۔۔۔‘‘نشے کی حالت میں وہ اُس کا نام پکارتا کئی چیزوں سے ٹکرا کر گرا تھا۔

جیون ننگے پیر روتی ہوئی پوری رفتار سے بھاگ رہی تھی ۔اُس نے ناصرف راستے میں آئے سب گلدانوں کو غم کی شدت سے ٹھوکر ماری بلکہ اپنے سارے گہنے بھی اتار اتار کر اِدھر اُدھر فرش پر پھینکے ۔وہ جازم کے خود تک پہنچنے سے پہلے اپنے کمرے تک پہنچ چکی تھی ۔اُس نے سرعت سے دروازہ بند کیا اور بیڈ پر ڈھے سی گئی۔

’’کھولو دروازہ۔۔۔

آج تمھاری شادی ہے۔۔۔

جاہل لڑکی ۔۔۔

نافرمان لڑکی۔۔۔

تمھارا دلہا انتظار کر رہا ہے

کھولو دروازہ۔۔۔کھولو دروازہ۔۔۔۔۔۔۔۔‘‘

جیون نے سختی سے دونوں ہاتھ اپنے کانوں پر رکھ لیے ۔وہ کتنی ہی دیر اناب شناب بکتا وہی لڑکھڑا کر گر گیا تھا۔

حویلی کے سارے مہمان اپنی آنکھوں میں کئی سوال لیے حویلی سے رخصت ہوئے تھے۔۔۔جگمگاتی ساری بتیاں اُتار لی گئی تھیں۔۔۔اور مہکتے سارے گلدستوں کو کوڑا دانوں میں پھینکا جا چکا تھا۔یہ رات صرف جیون کے لیے ہی نہیں حویلی کے ہر فرد کے لیے سوگ کی رات تھی جو ہوش میں تھا۔

*****

’’رات جو کچھ ہوا ٹھیک نہیں ہوا ۔جیون بی بی کے ساتھ بڑا ہی ظالم ہوا ہے ۔شادی کا سماں پل پھر میں ماتم میں بدل گیا۔ اِن گنہگار آنکھوں کو یہ دن بھی دیکھنا تھا ، توبہ۔۔۔ توبہ۔‘‘مالی بابا نے اپنے میلے کچیلے رومال سے بوڑھی آنکھوں کو رگڑ کر صاف کیا۔

’’جیون بی بی کے ساتھ واقعی زیادتی ہوئی ہے ،مگر چاچا ہم کر ہی کیا سکتے ہیں۔ یہ مالک لوگ کب کونسی چال چل دیں پتا ہی کہاں چلتا ہے ۔اِن کی زندگی فلموں اور ڈراموں سے کم نہیں ہے ۔‘‘ ذکیہ بیگم کے خاص ڈرائیور شکور نے بھی رنج اور طنز کی سی کیفیت میں اظہارِ افسوس کیا تھا ۔

’’پر شکورے جیون بی بی کا کیا دوش تھا جو جازم بیٹا نے کسی کا لحاظ نہ کیا۔حویلی کی بیٹی کی اتنی تذلیل ۔ہماری آنکھوں کے سامنے جوان ہوئے ہیں یہ بچے ۔اِن کے دکھ اور زیادتیاں برداشت نہیں ہوتیں۔‘‘ مالی بابا بہت ہی دلگرفتہ تھے ایک بار پھر رونے لگے۔

’’سارا قصور چھوٹے بابا کا ہے ۔دیکھا نہیں تھا چاچا کیسی عجیب عجیب باتیں کر رہے تھے ۔اُنھوں نے اِتنی شراب پی رکھی تھی کہ ٹھیک سے چل بھی نہیں پا رہے تھے۔تو فکر نہ کر بس دعا کر کہ حویلی کے مالکوں کو عقل آجائے۔‘‘ شکور نے ٹیڑھا منہ کر کے کہا اور مالی بابا کے کندھے پر تسلی سے ہاتھ رکھ کر اپنا کام سنبھالنے چل دیا۔

جیون نے صبح صبح راہداری سے گزرتے ہوئے دو ملازموں کی اپنے بابت گفتگو سنی تو ایک بار پھر رات کی اذیت سے تڑپ اُٹھی۔اُس نے سوچا تھا وہ اپنے کمرے سے کبھی نہیں نکلے گی،اِس بھیانک حقیقت کا سامنا نہیں کرے گی، جازم کی شکل نہیں دیکھے گی،اُس سے بات نہیں کرے گی ،گم نامی کی زندگی گزار کر اُس سے نفرت کرے گی ،مگر اِتنی بزدلی جیون حیات کے ضمیر کو گوارا نہ تھی۔اُسے اپنی بے عزتی کا جواب لینا تھا۔اُسے اِس توہین کی وجہ جاننی تھی ۔اُسے اِس بیوفائی کا حساب مانگنا تھا۔اُسے جازم کو عدالت میں کھڑا کرنا تھا ایک ایک ناانصافی،جھوٹ اور دھوکے کی جواب طلبی کے لیے۔وہ کمزور نہیں تھی، اُسے لڑنا تھا ، بہت لڑنا تھا۔

وہ صدمے سے بت بنی چہرے پر بنا کوئی تاثر لیے جازم خان کے کمرے داخل ہوئی تو وہ بیڈ پر بے سدھ آڑھا ترچھا سویا ہوا تھا۔پورے کمرے میں شراب اور پرفیوم کی ملی جلی خوشبو پھیلی ہوئی تھی۔اُس کے چہرے کا اطمینان جیون کی تکلیف کو مزید بڑھا گیا تھا۔وہ لب کاٹتی بھیگی پلکوں سے اُسے کچھ دیر دیکھتی رہی ۔

’’کسی کا مان خاک میں ملا کر ،کسی کا دل توڑ کر ،کسی کا خواب جلا کر کوئی اتنی پرسکون نیند کیسے سو سکتا ہے ؟‘‘ جیون نے آنکھیں بند کر کے تکلیف سے سوچا۔

’’تم ایسے مجھے برباد کر کے ،بدنام کر کے اتنے سکون سے نہیں سو سکتے ۔۔۔جازم۔۔۔جازم۔۔۔جازم۔‘‘وہ کچھ دیر اپنی کیفیت سے لڑنے کے بعد سارے پردے ہٹاتے ہوئے پوری قوت سے چلائی تھی۔

ایک بلند غصیلی آواز پر جازم ہڑبڑا کر اُٹھ بیٹھا تھا۔اُس نے دونوں ہاتھوں کی ہتھیلیوں سے اپنی آنکھوں کو مسلا اور مکمل ہوش میں آتے ہوئے سامنے دیکھنے لگا۔جیون دروازہ بند کیے دروازے کے سامنے کھڑی تھی ۔وہ اُس وقت ایسا طوفان لگ رہی تھی جو سب کچھ تہس نہس کرنے کے لیے تیار تھا۔اُس کے چہرے کے تاثرات اُس کی اذیت کے ترجماں تھے تو اُس کی گہری خاموشی اُس کی ناراضگی کی گواہ۔

’’اچھا ! تو تم آئی ہو ۔اب بل سے کیوں نکلی ہو جب میلہ ہی ختم ہوگیا۔اپنی شادی خود ہی برباد کردی تم نے۔‘‘ وہ جمائی لیتے ہوئے تمسخرانہ انداز میں بولا تھا۔

’’کیوں کیا تم نے میرے ساتھ ایسا؟‘‘جیون کا لہجہ سپاٹ تھا۔

’’کیوں کیا میں نے ایسا؟ اچھا سوال ہے۔‘‘ جازم کے لہجے میں کوئی ملال نہیں تھا۔

’’کیوں کیا تم نے ایسا؟‘‘ جیون نے اُسی سرد انداز میں دوبارہ پوچھا۔

’’تمھیں ایک ماہ کے اندر شادی کرنی تھی ناں۔۔۔اتنی جلدی تو سیف جیسا شخص ہی مل سکتا تھا۔‘‘اب کی بار جازم طنزیہ ہنستے ہوئے بولا۔

’’کیوں کیا تم نے ایسا جازم ؟ کیوں؟‘‘ کانپتی آواز میں سوال بار بار دھرایا گیا۔ دھوکے کا صدمہ ایسا تھاکہ جیون اُس جمود کو توڑ نہیں پا رہی تھی۔

’’مجھے تمھارے حق میں جو ٹھیک لگا میں نے وہی کرنا چاہا،مگر تم نے میرے منصوبے کو تباہ کردیا بیوقوف لڑکی۔اگر میں تمھیں اپنے ارادے سے پہلے آگاہ کر دیتا تو تم طوفان کھڑا کر دیتی ۔میرا گمان تھا کہ تم اپنی عزت کی خاطر عین وقت پر سر جھکا دو گی ،مگر تم تو میرے گمان سے بھی زیادہ نافرمان نکلی۔‘‘جازم نے گلاس میں پانی ڈالتے ہوئے نہایت کڑوی باتیں بڑی ہی آسانی سے اُگل دیں۔

’’میرے حق میں ٹھیک ؟ اور وہ جو تم نے مجھ پر حق جتایا تھا مجھے خود پر حق دیا تھا۔اُس کا کیا ہوا؟‘‘ جیون پھٹی پھٹی آنکھوں سے بے یقینی کی کیفیت میں پوچھ رہی تھی۔

’’ایک چیز دل لگی ہوتی ہے جو اِس عمر میں کی جاتی ہے۔تمھاری میری دل لگی ختم جیون۔اُس نوکر نے مار تو کھائی مگر وہ پاگل سچّا تھا۔‘‘وہ اُس کے قریب آتے ہوئے ہر نقاب اُتارنے لگا۔

’’دل لگی ۔۔۔۔‘‘جیون کو اپنی سماعتوں پر شک ہوا تھا۔

’’ہاں۔۔۔ہاں۔۔۔دل لگی ۔۔۔‘‘وہ اپنے لفظ بار بار دہرا کر سفاکی سے ہنسا ۔

’’وہ محبت ،وہ وعدے ،وہ قربتیں۔۔۔۔وہ سب کیا تھا۔۔۔گھٹیا آدمی وہ سب کیا تھا۔۔۔۔جواب دو مجھے۔‘‘جیون اب زخمی شیرنی کی طرح اُس پر جھپٹی تھی ۔

’’حد میں رہو جیون ۔۔۔ورنہ زبان کھینچ لونگا تمھاری ۔۔۔تم میرے پاس خود چل کر آئی تھی اعتراف محبت کرنے۔۔۔مگر مجھے تم سے محبت نہیں ہوئی ۔۔۔میں تم جیسی عام لڑکی سے محبت کر ہی نہیں سکتا۔‘‘وہ اُس کے نازک ہاتھوں سے اپنا گریبان چھڑاتے ہوئے ایک ایک لفظ چپا کر بولا۔

’’مجھ جیسی لڑکی ؟تم نے بھی محبت کا جواب محبت سے دیا تھا،اب کہتے ہو محبت نہیں ۔وہ تمھارا دیوانہ پن ، وہ تمھاری پرواہ، وہ تمھاری باتیں ۔کیا سب جھوٹ تھا ؟ کیا سب ڈھونگ تھا؟ کیا سب کھیل تھا؟ ‘‘جیون جنونی انداز میں روتے ہوئے اُس کے قدموں میں ڈھے گئی تھی۔

’’ہاں ڈھونگ تھا ۔۔۔کھیل تھا۔۔۔ جھوٹ تھا۔۔۔اور میں چاہتا تھا یہ کھیل مزید چلے ،مگر اُس نوکر نے یہ کھیل بگاڑ دیا۔تمھاری شادی شادی کی رٹ سے میں عاجز آچکا تھا۔‘‘ جازم نے بڑے ہی دھڑلے سے اپنے دل کا کھوٹ ظاہر کیا ۔

’’کس بات کا بدلہ لیا مجھ سے ؟ کس محرومی کی سزا دی مجھے ؟ٹھکرا دیتے ،دھتکار دیتے ،مار دیتے جازم ۔سچّے جذبوں کو پامال نہ کرتے ۔مجھے یوں تباہ تو نہ کرتے۔‘‘وہ پوری طرح سے ٹوٹ کر بکھر چکی تھی ۔اُس نے اپنا سر فرش پر رکھا اور پھوٹ پھوٹ کر رونے لگی۔

’’اپنی حالت کی ذمہ دار تم خود ہو۔تم کوئی چھوٹی بچی نہیں تھی جسے ٹھیک اور غلط کا فرق سمجھایا جاتا۔ محبت میں بھی حدیں مقرر کی جاتی ہیں اور اِس کی پہل بھی ایک عورت کرتی ہے۔عورت خود برباد ہونا چاہے تو مرد سے پارسائی کی کیسی توقع؟‘‘ جازم نے جھک کر اُسے اُس کی نظروں میں مزید گرایا۔

’’ہاں ہے میری غلطی کہ میں نے آنکھیں بند کر کے تم پر اعتبار کیا ،تمھیں اپنا سمجھا ۔نہیں جانتی تھی کہ تم انسان کے روپ میں بھڑیے ہو، درندے ہو ،شیطان ہو۔‘‘ وہ سر اُٹھا کر تنفّر سے بولی تھی ۔

’’ہوں میں شیطان،اِس شیطان سے مت الجھو۔اور تباہی کو دعوت مت دو۔ اب سب ختم ہو چکا ہے۔میں تمھارا یہ جذباتی ڈرامہ مزید نہیں جھیل سکتا ۔دفع ہو جاو یہاں سے ۔‘‘ جازم نے کچھ قدم پیچھے ہٹتے ہوئے بیزار کن انداز میں حکم دیا تھا ۔

’’تم نے مجھے برباد کیا ہے،مجھے دھوکہ دیا ہے، اپنے اِس دھوکے کا حساب بھی تم ہی چکاو گے۔اپنی اِس دل لگی کو عزت سے نام بھی تم ہی دو گے۔ تمھیں مجھ سے شادی کرنی ہوگی جازم،کرنی ہی ہوگی ۔‘‘ وہ اُس کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر فیصلہ کن انداز میں غرّائی تھی۔

’’جس لڑکی کو اپنی عزت کی پرواہ نہ ہو اُسے کوئی بھی عزت نہیں دیتا۔تم میرے بالکل بھی قابل نہیں ہو ۔میں تم سے کبھی شادی نہیں کرونگا۔۔۔کبھی بھی نہیں۔‘‘جازم کے تیور کڑے اور لہجہ ٹھوس تھا۔

بے حرمتی اور بے وقعتی کے تیز دانتوں نے جیون کے جسم کیا روح تک کو کاٹ لیا ۔۔۔اُسے لگا ہزاروں سوئیاں اُس کے وجود میں پیوست ہو گئی ہیں۔۔۔ اُسے لگا سینکڑوں پتھر اُس کے اوپر برسائے گئے ہیں۔۔۔اُسے لگا اُسے ننگے سر سرِ بازار لٹکا دیا گیا ہے ۔۔۔اُسے سب کچھ لگا بس اِک سامنے کھڑا شخص کہیں سے بھی جازم نہ لگا۔

’’میں تمھیں اتنی آسانی سے یہ کھیل ختم کرنے نہیں دونگی۔تم اپنے وعدوں سے نہیں مکر سکتے ۔خوشی یا زبردستی تمھیں اپنا ہر وعدہ نبھانا ہوگا ۔ورنہ میں تمھارے سب کرتوتوں کا پردہ چاک کر دونگی ۔ میں سب کو بتا دونگی۔ سنا تم نے! میں سب کو بتادونگی۔‘‘وہ اپنے آپ کو نوچتے ہوئے سکتے کی حالت میں پیچھے دیوار سے جا لگی تھی۔

’’ہا ہا ہا ۔۔۔تمھاری دھمکیاں بھی تمھاری طرح کمزور ہیں۔جاؤ بتا دو سب کو۔ جازم خان کسی سے نہیں ڈرتا۔تم عورت ہو پہلی انگلی تم پر ہی اُٹھے گی۔یہ میرا گھر ہے ، یہاں میری حکومت ہے، یہاں میرا حکم چلتا ہے ،یہاں میری طاقت کا راج ہے، میرے مقابل آتے ہی کوئی تمھیں منہ نہیں لگائے گا ،کوئی تمھاری مدد نہیں کر ے گا ،کوئی تمھارا ساتھ نہیں دے گا جیون حیات ۔‘‘وہ زہریلی مسکراہٹ کے ساتھ اُس کی آنکھوں میں آنکھیں گاڑے اپنی طاقت کے زعم میں اترایا تھا۔

جیون نے کچھ پل اُسے نفرت سے دیکھا اور بے جان قدموں سے بنا کچھ کہے واپس چلی آئی ۔ اُسے یوں محسوس ہوا جیسے اُس کے لیے دنیا ختم ہوچکی ہے۔

*****

اِس رعونت سے وہ جیتے ہیں کہ مرنا ہی نہیں

تخت پر بیٹھے ہے یوں جیسے اُترنا ہی نہیں

اُسے اپنے کیے پر رتی برابر بھی ندامت نہیں تھی وہ نادم ہوتا بھی تو کیوں ،شرمندہ ہونے کے لیے پچھتانے کے لیے احساس کا ہونا ضروری ہوتا ہے اور جازم خان نے اپنی زندگی میں احساس کا سبق پڑھا ہی کب تھا ۔اُس کے نزدیک تو احساس بس اپنے مفاد کے بارے میں سوچنا ،اپنی ذات کو ترجیح دینا تھا۔جیون کے جانے کے بعد بھی وہ اپنے ہی سکون کے بارے میں سوچتا رہا۔اُسے نہ اِس بات کی فکر تھی کہ جیون کے ذہن میں کیا انتقام جنم لے گا نہ اِس بات کی پرواہ کہ رشتے داروں اور گھر کے مکینوں کے دل میں کیا سوال پیدا ہونگے۔اُس کے مطابق اُس کے پاس اتنی طاقت تھی کہ وہ کسی کو جواب دہ نہیں تھا۔یہ اُس کی مغرور خودسر طبیعت تھی کہ وہ اپنے آگے ہر وجود کو چیونٹی کے برابر سمجھتا تھا۔

’’تم اُس چیونٹی کی طرح ہو جیون جو بس کاٹ سکتی ہے تمھارے اندر وہ زہر نہیں جو جازم خان پر اثر کرے۔‘‘ وہ اپنی ہی سوچ سے بدمزہ ہو کر سگریٹ سلگانے لگا۔اُس نے لمبے لمبے کش لیے تاکہ ہر سوچ سے فرار حاصل کر سکے ،مگر وہ چاہ کر بھی ذکیہ بیگم کو نظر انداز نہیں کرسکتا تھا۔ ایک وہی تھیں جن کے سامنے اُسے جواب دہ ہونا تھا۔

’’مجھے کچھ دنوں کے لیے اِس حویلی سے دور چلے جانا چاہیے۔‘‘بے چینی سے ٹہلتے ہوئے اچانک وہ رک سا گیا ۔اپنے خیال کو عملی جامہ پہنانے کے لیے اُس نے الماری کی طرف قدم بڑھا ئے اور پھرتی سے ضروری ضروری چیزیں نکال کر بیڈ پر پھینکنا شروع کر دیں۔

’’کہاں جانے کی تیاری ہورہی ہے جازم؟ ‘‘ذکیہ بیگم کی آواز پر جازم کے پیکنگ کرتے ہاتھ رک گئے تھے۔اُس نے نظر اُٹھا کر اوپر دیکھا تو وہ دروازے میں کھڑی اُسے سوالیہ نگاہوں سے گھور رہی تھیں۔

’’امّی جان آپ یہاں؟آپ نے کیوں زحمت کی مجھے بلالیتیں۔‘‘جازم نے سیگریٹ بجھاتے ہوئے گھبرا کر کہا۔اُس کے چہرے پر کچھ شرمندگی تھی جسے اُس نے چھپانے کی کوشش نہیں کی۔

’’کیا تم اِس قابل تھے کہ خود چل کر میرے پاس آتے۔‘‘ذکیہ بیگم نے منقش لکڑی کے صوفے پر بیٹھتے ہوئے طنزیہ جواب دیا تھا۔

’’میں جانتا ہوں کہ آپ مجھ سے کیا کہنا چاہتی ہیں۔‘‘وہ نظریں چراتے ہوئے آہستگی سے بولا۔

’’میں کہنا نہیں،پوچھنا چاہتی ہوں۔بتاؤ جازم ایسی کیا آفت آپڑی تھی کہ تم نے یہ سب کرنے سے پہلے ایک بار بھی حویلی اور میری عزت کے بارے میں نہیں سوچا۔شادی نہیں کرنی تھی تو شادی کا ڈرامہ رچانے کی کیا ضرورت تھی آخر؟‘‘ذکیہ بیگم کا انداز نہایت درشت تھا۔

’’جیون شادی کے لیے بضد تھی۔چند دن ہنس کر بات کیا کرلی وہ تو محبت سمجھ بیٹھی۔ہر وقت شادی شادی کی رٹ۔اُس لڑکی نے مجھے پاگل کردیا تھا۔‘‘اُس نے غصّے سے کھولتے ہوئے سارا الزام جیون پر لگا دیا ۔

’’اگر تم مجھے بر وقت اِس حقیقت سے آگاہ کر دیتے تو میں اُس کا رشتہ کہیں اور کر دیتی یا اُسے سمجھا دیتی۔‘‘ذکیہ بیگم نے بھنویں سکیڑ کر حل سامنے رکھا تھا۔

’’وہ اِتنی بے قابو ہو چکی تھی کہ اُسے سمجھانا بے سود تھا۔میں نے سوچا سیف کو قائل کرکے دھوکے سے اُن کا نکاح کرادونگا،مگر نشے کی حالت نے میرا سارا منصوبہ تباہ کردیا۔‘‘جازم افسوسناک لہجے میں اپنی غلطی کا اعتراف کرنے لگا۔

’’تم اتنے سمجھدار ہو کر ایسی بیوقوفی کیسے کر سکتے ہو ؟سب کچھ ٹھیک ہوجائے گا۔جیون بھی ایک دن سنبھل جائے گی،لیکن اِس حویلی کے ماتھے پر جو دھبّہ لگا ہے وہ کیسے مٹے گا؟‘‘ ذکیہ بیگم نے کاٹ دار لہجے میں سوال کیا۔اُنھیں ہر شئے سے زیادہ اپنی شا ن و شوکت کی پرواہ تھی۔

’’بڑی حویلی میں جب ماموں ندیم کی بیٹی عین نکاح کے وقت بھاگی تھی تو کتنے دن تک لوگوں نے یاد رکھا؟ انجم خالہ کے بیٹے نے جب اپنی منگنی کے موقع پر سب کے سامنے صاف انکار کردیا تو کتنے سوال اُٹھے تھے؟یہ کہانیاں یہ داستانیں نسل در نسل چلی آرہی ہیں۔ہر نئی کہانی کے بعد دنیا پرانی کہانی فراموش کر دیتی ہے۔‘‘جازم نے ایسی مثالیں پیش کیں کہ ذکیہ بیگم کچھ پل کے لیے خاموش ہو گئیں۔

’’یہ سب بھولنا اِتنا آسان نہیں ہوتا جازم۔‘‘کچھ توقف کے بعد وہ فکرمندی سے بولی تھیں۔

’’اگر اِس وقت پریشانی کی کوئی وجہ ہے تو وہ بس جیون ہے۔اُس کا کوئی بندوبست کرنا ہوگا ،ورنہ وہ میرے اور آپ کے لیے کوئی مشکل کھڑی کردے گی۔‘‘جازم نے اُن کا ہاتھ پکڑ کر متفکرانہ انداز میں اپنی پریشانی ظاہر کی ۔

’’میری اب بھی یہی رائے ہے کہ تم اُس سے شادی کرلو۔اِس بدنامی کے بعد کون اُسے اپنائے گا۔‘‘ذکیہ بیگم نے سنجیدگی سے اپنی تجویز دی تھی۔

’’امّی جان شادی دل سے کی جاتی ہے ۔میں نے کئی بار اُسے پرکھا ہے وہ میرے معیار پر پوری نہیں اُترسکی۔وہ ایک ضدی ،نافرمان اور کمزور کردار کی لڑکی ہے۔وہ جازم خان کی بیوی اور اِس حویلی کی رانی بننے کے بالکل بھی لائق نہیں۔‘‘وہ ناپسندیدہ تاثرات دیتے ہوئے جیون کی بھرپور کردار کشی کر گیا تھا۔

’’تو پھر کیا چاہتے ہو تم؟‘‘ذکیہ بیگم گہری سانس لے کر اُس کی طرف دیکھنے لگیں ۔

’’آپ اُسے سیف سے شادی کرنے کے لیے راضی کریں۔‘‘جازم نے نظریں جھکا کر مدد طلب انداز میں کہا تھا۔

’’اُن دونوں کا کوئی جوڑ نہیں۔سیف ایک معمولی شکل و صورت کا نوکر اور جیون ایک خوبصورت لڑکی۔‘‘ذکیہ بیگم سخت اُلجھن میں مبتلا نظر آئیں۔

’’عورت بدنام ہوجائے تو خوبصورت نہیں رہتی۔‘‘جازم کی آخری بات ایسی تھی کہ ذکیہ بیگم کی ساری اُلجھن دور ہو گئی۔

*****

غم دے گیا نشاط شناسائی لے گیا

وہ اپنے ساتھ اپنی مسیحائی لے گیا

جازم کے کمرے سے اُس کے کمرے تک کا فاصلہ کئی میلوں تک پھیل گیا تھا ۔ اذیت کے پچھلے پندرہ منٹ بچپن تک کے خوابوں کو جلا آئے تھے ۔وہ اپنے خوابوں کی اتنی بھیانک تعبیر پر بے تحاشہ روتی چلی جارہی تھی۔محبت اور احترام کے بیچ کا بند ٹوٹ جائے تو بس آنسوؤں کے سیلاب ہی آتے ہیں۔اُسے بھی یہ سیلاب قدم جما کر چلنے نہیں دے رہا تھا۔بار بار کوئی اُس کا ہاتھ پکڑ کر ہتک سے ذلت کے گڑھے میں گرا دیتا،وہ اُٹھتی ،پھر گرتی اور چہرے پر لگنے والی گندگی سامنے کا راستہ اور میلا کردیتی۔ اُس نے سختی سے اپنی آنکھیں رگڑ کر دھندلا منظر صاف کیا تو سامنے سیف آتا ہوا دیکھائی دیا۔

’’کیوں آئے ہو یہاں؟ ‘‘ جیون کی آواز اتنی مدھم تھی جیسے وہ بولنے کی ساری طاقت کھو چکی ہو۔

’’مرہم رکھنے۔‘‘ سیف نے تڑپ کر کہا تھا۔

’’مسیحا جب درد دینے لگے تو ہر دوا بے اثر ہوتی ہے ،ہر مرہم بیکار جاتا ہے۔‘‘ وہ شکست خوردہ انداز میں بولی۔

ـ’’مجھے بتاو اُس نے تمھیں کیا کہا ہے ؟‘‘ سیف اپنی زندگی کو یوں بے بسی سے جھونجتا دیکھ کر فکرمندی سے پوچھنے لگا ۔

’’چلے جاؤ یہاں سے۔‘‘ جیون نے اب آنسو پیتے ہوئے بلند آواز میں کہا تھا۔

’’میں تمھیں اِس حالت میں چھوڑ کر نہیں جا سکتا۔‘‘سیف کی آواز میں پرواہ تھی محبت تھی۔

’’منحوس ہو تم ۔کالی زبان ہے تمھاری ۔جیسے تم نے کہا تھا ویسے ہی تو ہوا ہے ۔اب تم میرا تماشا دیکھنے آئے ہو؟ مجھے تمھاری سڑی ہوئی صورت نہیں دیکھنی اور نہ ہی مجھے تمھاری جھوٹی ہمدردی چاہیے۔‘‘ جیون نے اپنی ذات پر ملی جانے والی کیچڑ میں سیف کو بھی دھکیلا اور تیز تیز چلنے لگی۔

’’جیون۔۔۔جیون۔۔۔بات سنو میری ۔‘‘ وہ اُس کے پیچھے چلتے ہوئے اُسے پکارنے لگا۔ جیون بغیر کوئی جواب دیئے آگے بڑھ چکی تھی۔

وہ تو سب جانتا تھا ،وہ سب سمجھ چکا تھا کہ اُن دونوں کے بیچ کیا بات ہوئی ہے،مگر وہ جیون کو ہار مانتے ہوئے نہیں دیکھ پا رہا تھا ۔۔۔وہ ہر صورت اِ س ختم ہوتے ہوئے راستے میں سے کوئی نہ کوئی راہ نکالنے کا خواہشمند تھا۔۔۔وہ ہر قیمت پر اِس کیچڑ میں پھول کھلانے کی تگ و دو میں تھا۔

’’مت آؤ میرے پیچھے۔کیوں اتنے ڈھیٹ ہو تم ؟ کیا تمھاری کوئی عزت ِ نفس نہیں ہے؟ تم انسان ہو کہ جانور جو کچھ بھی محسوس نہیں کرتے۔‘‘ جیون مسلسل اپنا نام پکارنے پر پلٹ کر چلائی ۔وہ اُسے کیسے سمجھاتا کہ اُس کے آنسوؤں کے آگے سیف کو کچھ نظر نہیں آتا،اُس کے کرب کے بدلے سیف کا درد کوئی معنی نہیں رکھتا ، اُس کے احترام کے سامنے سیف کی ساری عزت نفس گھٹنے ٹیک دیتی ہے۔

’’اُس نے مجھے قید کیا ۔۔۔تکلیف پہنچا ئی ۔۔۔ یہ بھی کہا کہ وہ تم سے کبھی شادی نہیں کرے گا۔۔۔میں بارہا تمھیں اُس کی اصلیت کا یقین دلاتا رہا ،پر تم نہیں مانی۔۔۔میں نے تمھیں شادی پر بھی اِس لیے اکسایا تھا کہ جلد تمھاری آنکھیں کھل جائیں۔۔۔پل بھر کے لیے تو اُس کا کھیل دیکھ کر میں بھی دھوکہ کھا گیا کہ وہ تم سے شادی کرنے والا ہے ،مگر اُس نے اپنی اصلیت ثابت کردی ۔۔۔مجھے اب تو اپنا خیر خواہ مان لو۔۔۔میں کبھی تمھارا برا نہیں چاہ سکتا ۔‘‘ سیف نے چلتے چلتے جیون کے سامنے آکر ہاتھ جوڑ کر درخوست کی۔

’’دور ہو جائو میری نظروں سے ۔دفع ہو جاؤ مطلبی انسان۔ایک انسان کی زندگی داؤ پر لگی ہے اور تم یہاں خود کو ٹھیک ثابت کرنے آگئے ہو۔‘‘ اِس وقت سیف کا خود کو دفاع کرنا جلتی میں تیل کا کام کر گیا تھا۔

’’ہاں میں ہوں مطلبی اور مجھے تمھاری خوشیوں سے مطلب ہے ۔‘‘

’’ختم ہوچکی ہیں میری خوشیاں۔سنا تم نے! ختم ہو چکی ہیں میری خوشیاں۔‘‘ سیف نے درد بھری آواز میں کہا تو وہ بھی اُسی کے لہجے میں بولی۔

’’تو اُس انسان کو بھی خوش رہنے کا کوئی حق نہیں۔اُس کی خوشیاں بھی ختم کردو۔‘‘ سیف کے الفاظ ایسا تجسس لیے ہوئے تھے کہ جیون رک کر اُس کے چہرے کی طرف دیکھنے پر مجبور ہوگئی۔

’’جازم لالہ کی زندگی میں کوئی اور لڑکی آچکی ہے۔عنقریب اُن دونوں کی شادی ہے۔ اپنے ساتھ ہوئی ناانصافی پر آواز اُٹھاؤ۔‘‘سیف نے بہت ہمت جمع کرکے اُس کے ٹوٹے دل کو ایک اور چوٹ پہنچائی تھی۔پہلے تو جیون کے دل کے آئینے میں شگاف پڑا تھا،مگر اِس انکشاف کے بعد یہ آبگینہ چکنا چور ہو چکا تھا ۔وہ اپنی جگہ پر کھڑی بت بن چکی تھی۔ہر چیز اُس کے سامنے بے بسی کے سیلاب میں ڈوب رہی تھی ،ختم ہو رہی تھی ،اور اب یہ پانی اُس کی گردن تک پہنچ چکا تھا۔اُس کی سانسیں بے ترتیب ہونے لگیں اور آنسوؤں سے بھیگا چہرہ زرد پڑ گیا۔سیف کچھ قدم پیچھے ہٹا اور پھر اُس نے اپنی گردن جھکا لی تھی۔ وہ جیون کے چہرے پر وہ رنگ نہیں دیکھ سکتا تھا، جو محبت میں ڈاکہ پڑنے پر اُبھرتے ہیں۔

ہاں کبھی خواب عشق دیکھا تھا

اب تو آنکھوں سے خوں ٹپکتا ہے

’’تم اِتنا کیسے گر سکتے ہو کہ مجھے خاک میں ملا کر اپنے خوابوں کا محل تعمیر کر لو ۔۔۔

تم اِتنا کیسے گر سکتے ہو کہ مجھے وعدوں میں باندھ کر وہی وعدے کسی اور سے نبھاو۔۔۔

تم اِتنا کیسے گر سکتے ہو کہ میری ہستی کو مٹا کر اپنی ذات پر کسی اور کو اختیار دے دو۔۔۔

تم اِتنا کیسے گر سکتے ہو کہ میرے حصّے کی خوشیاں،میرے حصّے کی محبت کسی اور لڑکی کے نام کردو۔۔ ۔

کتنے جھوٹے ،دھوکے باز اور سنگدل ہو تم جازم۔ ۔۔‘‘

وہ چکراتے ہوئے پیچھے ستون سے جا لگی تھی ۔سیف نے اُسے سہارا نہیں دیا وہ اِس وقت اُس کی کمزوری نہیں بننا چاہتا تھا۔اُس نے ماربل کے ستون کو سختی سے پکڑ لیا اور گردن پیچھے جھکا کر آنکھیں بند کر لی تھیں۔دل زور زور سے دھڑک کر اُکسا رہا تھا جیون ! یہ دل زمین میں گاڑ کر اُس کی محبت کا گلا گھونٹ دے یا جازم کے سینے میں چھید کرکے اُس کا کالا دل سب کے سامنے رکھ دے۔ذہن چیخ چیخ کر صلاح دے رہا تھا جیون ! اِن ستونوں سے ٹکرا ٹکرا کر اُسے ذہن سے نکال دے یا حویلی میں رکھے بڑے بڑے پتھر اُس کے سر پر برسا کر اُسے اُس کی ناپاک سوچ کی سزا دے ۔وہ اپنے اندر ایک جنگ لڑنے لگی ۔پہلے اُسے لگتا تھا کہ یہ جنگ اُس کی اور جازم کی ہے ،مگر اب اِس حقیقت نے کہ اِس لڑائی میں کوئی تیسرا بھی تھا اُس کی ساری طاقت ختم کردی تھی۔یکدم اُس نے آنکھیں کھولیں ۔اُس کی کالی آنکھیں سرخ ہو رہی تھیں۔آہستہ آہستہ یہ سُرخ آندھی اُس کے پورے وجود کو لپیٹ میں لینے لگی کیونکہ چوٹ دل کے کسی ایک حصّے پر نہ لگی تھی آج پورا دل قتل ہوا تھا۔وہ جھٹکے سے اپنی جگہ سے ہلی اور اپنے کمرے کی طرف جانے کی بجائے دوبارہ اُسی راستے پر مڑی جہاں سے وہ ابھی آرہی تھی۔سیف نے ترس بھری نگاہوں سے اُسے دیکھا اور آہستہ آہستہ اُس کے پیچھے چل دیا۔

’’تم۔۔۔تم ۔۔۔تم پھر آگئی ہو۔‘‘ جازم اُسے تیزی سے اندر داخل ہوتا دیکھ کر بوکھلایا تھا۔

’’سنا ہے تم نیا عشق فرما رہے ہو۔کون ہے تمھارا اگلا شکار؟ ‘‘ جیون نے پاٹ دار آواز میں کرب سے پوچھا۔

’’بڑے جاسوس ہیں تمھارے ۔‘‘ جازم اُس کی اِس معلومات پر اچھا خاصا حیران ہوا تھا۔

’’ہاں کی ہے جاسوسی میرے دل نے ، جو تمھارے اندر چھوڑا تھا میں نے ۔۔۔میری روح نے ،جو تمھیں ہر جگہ محسوس کرتی رہی۔۔۔میرے دماغ نے ،جو تمھارے خواب میں راتوں کو سویا نہیں ۔۔۔صد افسوس کہ میں پھر بھی تمھارے دھوکے کو جان نہ سکی تمھارے کھیل کو سمجھ نہیں پائی۔‘‘ جیون پشیمانی سے تر آنکھیں اُس کی آنکھوں میں ڈال کر خود کو کوس رہی تھی۔ ضبط کے باوجود اُس کے آنسو بے اختیار ہونے لگے۔

’’دل کو اِتنا خیال ہو کہ اپنی حد یاد رکھے،روح میں اِتنا احساس ہو کہ میلی ہونے سے ڈرے اور دماغ کو اِتنی سمجھ ہو کہ اوقات میں رہ کر خواب دیکھے۔ مجھے الزام دینے سے پہلے سوچو جیون ! کہ تمھیں کیوں اور کس لیے ٹھکرا دیا گیا۔‘‘ جازم نے اُس کے مقابل آکر اُسے پستی میں گرا یا تھا۔

’’مجھ سے گناہ ہوا، سنگین غلطی ہوئی ۔مجھے جتنا بدنام ہونا تھا میں ہو چکی ۔اب میں اِس غلطی کو ٹھیک کرونگی۔ میں تمھیں کسی اور سے شادی نہیں کرنے دونگی۔‘‘وہ بے دھڑک انداز میں بولی۔اُس کے لہجے میں پختہ عزم تھا تو چہرہ ہر خوف سے عاری۔

’’ایسی جنگ کا اعلان نہیں کرتے جس میں ہارنا ہی مقدر ہو۔میں کسی اور سے شادی کا وعدہ کر چکا ہوں جیون ۔مجھے کسی اور سے محبت ہو چکی ہے ۔وہ تم سے کہیں زیادہ حسین اور فرمانبردار ہے ۔مجھے میرے دل پر اختیار نہیں رہا۔زبردستی کی تکرار میں اپنا اور میرا وقت برباد نہ کرو۔ ‘‘ جازم اُس کے دل پر پیر رکھ کر بے پروائی سے ہر بات کہہ گیا تھا۔

’’مجھ سے کیا وعدہ تم نے کسی اور سے کرلیا۔۔۔مجھ سے کی محبت کسی اور کی ہوگئی۔۔۔مجھ سے بڑھ کر تمھیں کوئی اور خوبصورت اور فرمانبردار نظر آگیا۔۔۔یہ میری فرمانبرداری ہی تو تھی جو مجھے اِس موڑ پر لے آئی ہے۔۔۔دیکھو ! مجھے غور سے دیکھو تم نے میرا کیا حال کردیا ہے ۔۔۔تم نے کسی اور کے لیے مجھے بے آسرا چھوڑ دیا ہے ۔‘‘جیون طنزیہ انداز میں کہتے ہوئے اُس کے قریب چلی آئی۔اُس کی پلکوں سے خواب ٹوٹ ٹوٹ کر گر رہے تھے ۔وہ زخمی مسکراہٹ ہونٹوں پر سجائے اُسے ایک ٹک دیکھنے لگی۔

’’بند کرو یہ موازنہ کرنا۔ہر انسان بہتر سے بہتر کی تلاش میں ہوتا ہے اور یہ میرا جائز حق ہے ۔میں نے تمھارے لیے بھی ایک فیصلہ کیا ہے ۔جس دن میری شادی ہوگی اُس دن تمھاری اور سیف کی بھی شادی کردی جائے گی۔دیکھو! میں تمھیں بے سہارا نہیں چھوڑ رہا۔‘‘ جازم کی آواز اب کی بار دھیمی تھی۔وہ صلاح صفائی سے یہ معاملہ نبٹانا چاہتا تھا۔

’’احسان کر رہے ہو میرا نام اُس بدصورت نوکر کے ساتھ جوڑ کر،وہ نوکر جو اِس قابل بھی نہیں کہ اُس سے کچھ پل بات کی جائے۔کیسے تم میری پوری زندگی کا فیصلہ کر سکتے ہو ؟ کس نے دیا ہے تمھیں یہ اختیار؟‘‘ جیون نے غصے کی شدت سے کانپتے ہوئے کہا۔ ایک بار پھر اپنی توہین پر دروازے کے باہر کھڑے سیف کا ضبط جواب دے گیا تو وہ وہاں ایک پل نہ رکا۔

’’ہوش میں آؤ لڑکی ۔۔۔سمجھداری سے کام لو ۔۔۔تم اِس شادی سے انکار کرو گی تو اپنی چادر اپنے ہی ہاتھوں سے تار تار کرو گی۔۔۔تمھارا یہ جنون تمھیں سرِ عام برہنہ کر دے گا۔۔۔شکر کرو میں تمھیں ڈھانپ ر ہا ہوں۔۔۔وہ نوکر تمھارے قدموں میں بیٹھا رہے گا۔۔۔اور تم جب چاہو گی ہم چوری چوری مل بھی لیں گے۔‘‘ جازم اُسے قریب کرتے ہوئے آنکھ مار کر خباثت سے ہنسا۔

’’بس کرو جازم ۔‘‘ جیون نے اُسے پیچھے دھککّا دیا اور اپنی پانچوں اُنگلیاں پوری قوت سے اُس کے گال پر چھاپ دیں۔

’’تمھاری ہمت کیسے ہوئی جازم خان پر ہاتھ اُٹھانے کی ۔دو ٹکے کی حیثیت رہ گئی ہے تمھاری ۔ٹھیک ہو رہا ہے تمھارے ساتھ بالکل ٹھیک ۔نکل جاؤ یہاں سے ۔آئیندہ اپنی منحوس صورت لے کر یہاں مت آنا۔‘‘جازم اُس کا ہاتھ پکڑ کر گھسیٹتے ہوئے کمرے کے دروازے تک لایا۔

’’میں دیکھتی ہوں کیسے شادی رچاتے ہو تم ۔میں تمھیں بھی خوش نہیں رہنے دونگی ۔میں تمھیں اپنے ساتھ یہ ناانصافی نہیں کرنے دو نگی۔‘‘ اُس نے جازم کی گرفت سے اپنا ہاتھ چھڑاتے ہوئے دھمکی دی ۔ وہ کسی صورت ہار ماننے والی نہ تھی۔

’’تو ٹھیک ہے لڑتی رہو۔۔۔جلتی رہو۔۔۔اور بھسم ہو جاؤ۔‘‘جازم نے رعونت سے کہا اور اپنا ہاتھ ڈھیلا چھوڑ دیا۔ جیون دھڑام سے نیچے گری تھی ۔اُسے لگا واقعی نیچے آگ ہے۔

*****

ہماری سادگی یا غلطی کہیے صاحب

ہم تلوار کی دھار پر سر رکھنے کے بعد

ہم کانٹوں کی نوک سے کھیل کھیل کر

ہم رسوائیوں کے شہر کے مکین جب بنے

ہم درد کے ہر دریا میں ڈوب کر آئے تب

سچ ڈھونڈتے ہیں ہم

خود سے پوچھتے ہیں ہم

وہ محبت جسے جرم زمانے نے کہا

اُس جرم پر ندامت ہے کہ نہیں ہے ؟

اپنا آپ مٹا کر

ہر کشتی جلا کر

دل سے کر بیٹھے ہیں سوال

محبت ہے کہ نہیں ہے ؟

اِس نئے انکشاف نے اُسے بہت کچھ سوچنے پر مجبور کردیا تھا۔محبت خود سوال بن کر اُس کے سامنے آکھڑی تھی۔ محبت تھی ؟ محبت ہے ؟ محبت رہے گی ؟ دن رات یہی کشمش تھی جو اُسے اُلجھانے لگی۔اُس نے ایک ایک کرکے گزرے سارے دنوں کا حساب لگانا شروع کردیا۔کوئی بھی دن ایسا نہیں تھا جس دن اُس کی دل کی زمین پر محبت کا سورج پوری طرح سے چمکا ہو،کوئی بھی رات ایسی نہیں تھی جب محبت کا چاند اُس کی کھڑکی سے اُترا ہو، کوئی بھی موسم ایسا نہیں تھا جو محبت کی بہار یا برسات لایا ہو۔اُس شخص نے شادی کے پہلے دن رنگ بدلا تو اُس کی محبت بھی پھیکی پڑ گئی تھی۔جو زبان محبت کی دعویدار تھی دل کے اِک اشارے پر محبت سے منکر ہو چکی تھی۔وہ اُسے اِتنا برا لگنے لگا تھا کہ وہ اُس کی اچھی یادوں سے بھی فرار ہونا چاہتی تھی۔اُسے محبت سے زیادہ آزادی کی طلب تھی ۔جو محبت اُس کے مطابق نہیں تھی ،اُسے نبھانا اُس کے نزدیک بیوقوفی کے مترادف تھا۔وہ ناسمجھ تھی اُس نے محبت میں جڑے چار حروف کو غور سے دیکھا ،لیکن وہ اِن چار حروف کی گہرائی میں اُترنے کا حوصلہ نہیں کر پا رہی تھی۔محبت کے چار دن ہوتے ہیں تو اذیت کے سولہ ،مگر اِس حساب کتاب میں کوئی بے صبر کہاں پڑ سکتا ہے۔لوگ کہتے ہیں محبت تب تک زندہ رہتی ہے جب دونوں طرف سے برابری کی ہو،لیکن محبت کی عمر تب بڑھتی ہے جب ایک انسان دوسرے انسان سے آگے نکلنے کی کوشش کرے۔وہ بھی اُس سے آگے نکلی تھی ،محبت میں نہیں ضد میں۔جس محبت کی صورت پر مر کر وہ ہر رشتے کا دل توڑ آئی تھی اُس محبت سے اُس کا سامنا ہوا ہی کب تھا۔

’’ٹھیک ہی تو کہتی ہیں چاچی شگو! محبت من مارنے۔۔۔مرضی کو مٹانے یا پھر خود کو بھی مٹانے کا نام ہے۔۔۔جس میں برابری کے تقاضے ہوں۔۔۔نفع نقصان کے اندیشے ہوں۔۔۔ تو تو ہو۔۔۔میں میں ہو۔۔۔وہ محبت نہیں ہو سکتی۔۔۔یہ جو میرے سامنے ہے یہ محبت کا روشن راستہ نہیں یہ گمراہی کا سیاہ دائرہ ہے ۔‘‘صاحبہ نے بیڈ شیٹ پر بنے سیاہ پھولوں کو عجیب نظروں سے دیکھ کر سوچا۔

’’اِس کا مطلب نہ اُسے محبت تھی نہ مجھے محبت ہے۔وہ صرف مجھے اچھا لگا تھا۔ کسی کو پسند کرنا پوری محبت کہاں ہوتی ہے ،یہ تو بس محبت کی پہلی سیڑھی تھی جس پر قدم رکھ کر میں نے اُڑنا چاہا۔ یہ جو بھی تھا پسندید گی، کشش ، یا قسمت کا لکھا میں نے اِس تعلق کو نبھانے کی پوری کوشش کی ،مگر اُس کے ظلم اور انا کے پیروں نے میری برداشت کو کچل دیا ہے۔اچھا ہے مجھے سچّی ، جنونی،بے غرض محبت نہیں ہوئی ۔یہ شخص ایسی محبت کے قابل ہی کہاں ہے۔‘‘ وہ کالے پھولوں کو مسلتے ہوئے اپنے آپ کو جیسے تسلی دینے لگی۔اُس نے ایک جھٹکے سے بیڈ شیٹ اُتاری اور نفرت سے قالین پر پٹخ دی ،اپنی دانست میں اُس نے ان چاہی محبت کی چادر اُتار پھینکی تھی۔

’’مجھ جیسی کتنی ہی لڑکیاں محبت کی ا صل روح کو جانے بغیر،سمجھے بنا، محبت کی دعویدار ہوجاتی ہیں ،طرف دار ہوجاتی ہیں۔کسی اجنبی سے متاثر ہو کر انمول رشتوں کی بازی لگا دیتی ہیں۔ میں سمجھتی تھی میں انسانوں کو پرکھنا سیکھ گئی ہوں،مگر میں تو اِس دل کو نہیں پرکھ سکی جو میرا اپنا تھا ۔میں نے کتنی آسانی سے اِس راہ کا انتخاب کر لیا ، ایک بار بھی نہیں سوچا کہ یہ راستہ اُس دنیا کی طرف جاتا ہے جہاں غلطیاں ،گناہ انسانوں کی طرح آس پاس گھومتے ہیں۔میری زندہ غلطیوں نے میری سانسیں دوبھر کردی ہیں۔میں نے اپنی راہوں کے دیپ خود بجھائے ہیں میں کیسے روشنیوں کو مناؤں؟میں نے اپنے قدموں تلے خود کانٹے اگائے ہیں میں کیسے پھولوں سے شکوہ کروں؟میں نے اِس زندگی کی کتاب میں خود بے سکونی لکھی ہے میں کس پر اپنے سکون کو لوٹنے کا الزام لگاؤں؟ ہاں میں نے ہی اپنی نیند کی آنکھیں نوچ لیں اپنی خوشیوں کی نبض کاٹ دی میں کہاں اپنا قاتل ڈھونڈوں؟ تمھارا جرم تو بعد میں ثابت ہوتا ہے پہلے میں خود اپنی مجرم ہوں۔میں بیوقوف نہیں باغی ہوں۔ناسمجھ لوگوں کو اُن کے رشتے سمجھا سکتے ہیں ،مگر باغیوں کو صرف زمین کی دھول سمجھاتی ہے وہ تب سمجھتے ہیں جب وہ سزا اور ملامت کی مٹی میں مٹی مٹی ہوتے ہیں۔مجھ سے بھلی وہ جاہل عورت ہے جس نے مجھے خود شناسی عطا کی ۔پڑھا لکھا بھی تب کام آتا ہے جب دماغ میں جذب کرنے کی صلاحیت ہو ، جب دل میں محسوس کرنے کا احساس ہو ۔میری سار ی ڈگریاں کس کام کی ہیں جو میں محبت، عزت اور رشتوں کے تقدس کا فلسفہ نہ سمجھ پائی۔ میرے جیسے لوگوں کو سچّی محبت نہیں ملتی اور شاید ملنی بھی نہیں چاہیے ،کیونکہ ہم جیسے لوگ جھوٹے جذبوں کا ہاتھ پکڑ کر سیدھے رستوں کو چھوڑ دیتے ہیں۔ ہماری منزل انا اور ضد ہوتی ہے اور ہمارا حاصل نفس کی پرستش ۔یہ درد کی آگ میری خود کی لگائی گئی ہے وہ تو بس اِسے بجھنے نہیں دے رہا۔‘‘آج صاحبہ کا کمرہ اُس کے لیے عدالت تھا اور وہ صرف سچ بولنا چاہتی تھی۔

*****

’’آپ نے شاید ٹھیک ہی کہا تھا ، مجھے اُس سے محبت نہیں ہوئی۔‘‘ صاحبہ کی بات پر دیواروں پر لگی قدیم پینٹنگز کو صاف کرتے چاچی شگو کے ہاتھ رک گئے تھے،مگر وہ کچھ بولی نہیں۔

’’پنجرہ چاہے جتنا بھی خوبصورت ہو ہوتا تو پنجرہ ہی ہے ناں۔میں سمجھ گئی ہوں کہ وہ کچّا گھر جہاں انسان اپنی مرضی سے سانس لے سکے ،اُس سونے جیسے محل سے سو گنا بہتر ہے جہاں کے دروازے اور کھڑکیاں کسی اور کے حکم سے کھلنے کی پابند ہوں ۔‘‘اُس کا لہجہ رنج سے بھرپور تھا۔چاچی شگو نے اُسے غور سے دیکھا وہ کسی سنہری چڑیا سے کم نہ تھی جس کے پر کاٹ دیے گئے تھے۔چاچی شگو قالین پر آکر بیٹھ گئیں اور اِرد گرد بکھرے کپڑوں کو سمیٹنے لگیں۔

’’شکاری تب تک شکار کر سکتا ہے جب تک اُس میں دم خم رہے ۔شکاری اپنا جال لے کر سامنے دیکھتا ہے اور وقت اپنا جال لے کر پیچھے چلتا ہے ۔شکاری کی ایک لغزش ،اُس کی ایک بھول چوک اُسے شکاری سے شکار بنا دیتی ہے۔تب وقت اپنا جال پھنکتا ہے اور وقت کے جال سے نکلنا آسان نہیں ہوتا۔‘‘کپڑوں کو تہہ لگاتی چاچی شگو کی باتوں میں امید کی جھلک تھی۔

’’یہ کوئی عام شکاری نہیں ہے۔وہ اپنے ہنر میں ماہر ہے۔جب تک وقت اُسے پکڑے گا اتنا لمبا انتظار کرنے تک میں اپنی زندگی ہار جاؤنگی۔‘‘صاحبہ مایوس کن انداز میں بولی اور تہہ لگے کپڑے اُٹھا کر الماری میں رکھنے لگی۔

’’ہر ظلم چاہے جتنا بپھرا ہوا دریا کیوں نہ ہو بی بی ،کہیں نہ کہیں تو اُس کے بھی بند ہوتا ہے۔اپنی خاموشی سے اِس دریا کو بہنے دیجیے ۔آپ کی ضد اِس میں طوفان لا سکتی ہے ۔‘‘چاچی شگو نے اُسے مخلصانہ مشورہ دیا اور کمرے سے باہر جانے کے لیے پلٹیں۔

’’رکیے۔۔۔آپ بتائیے مجھے کیا کرنا چاہیے۔‘‘صاحبہ نے التجائیہ آواز میں کہا۔اِس وقت چاچی شگو ہی اُسے غمگسار نظر آرہی تھیں۔

’’آپ اُن سے التجا کریں رو کر گڑ گڑا کر ۔کچھ با تیں محبت اور حکمت سے منوائی جا سکتی ہیں۔‘‘چاچی شگو نے پلٹ کر سرگوشی میں کہا تھا۔

’’میں سب کچھ کر چکی ہوں۔ سارے ہتھیار اُٹھا چکی ہوں،مگر میرے حصے میں ہار ہے ۔نہ اُس پر منت ترلوں کا اثر ہے ، نہ محبت اور نہ پروا ہ کا۔اپنے آپ کو بہت بدلا ہے میں نے ،اُس کی مرضی سے ہنسی ہوں بولی ہوں، اُس کی خوشی کے لیے سجی ہوں سنوری ہوں ، اُس کے حکم پر سوئی ہوں جاگی ہوں، مگر وہ ویسا ہی رہا۔وہ تکبر کے خول سے کبھی باہر نہیں نکلے گا اور نہ مجھے آزاد کرے گا۔‘‘ صاحبہ کے الفاظ اور چہرہ دونوں بھیگنے لگے تو چاچی شگو نے اُسے بے چارگی سے دیکھا۔

’’کچھ لوگ فطرت سے مجبور ہوتے ہیں بی بی یا اُن کے ظلم کے پس پردہ کوئی اور کہانی ہوتی ہے۔‘‘ چاچی شگو نے مختصر کہا۔اُنھیں لگا اب کوئی بھی دلاسا دینا بے سود ہے ۔

’’کیا آپ جانتی ہیں وہ اِتنا ظالم کیوں ہے ؟ کیا آپ وہ کہانی جانتی ہیں جو میں نہیں جانتی۔‘‘صاحبہ کا انداز کریدنے والا تھا۔اُس کے لہجے میں حقیقت کو جاننے کی تڑپ تھی۔

’’شاید د ولت کی و جہ سے۔‘‘ چاچی شگو کو یہی وجہ نظر آئی۔

’’نہیں صرف دولت وجہ نہیں ہو سکتی۔وہ ایک جنونی انسان ہے۔حویلی میں دیکھیے کو ئی بھی چیز یا شئے موافق یا مناسب لگتی ہے آپ کو ؟ ‘‘ صاحبہ نے جان بوجھ کر اُنھیں اکسایا تھا ۔

’’آپ کی نظر میں مناسب اور موافق سے مراد ہم عام سے لوگ ہیں ناں ؟۔حیرت تو ہمیں بھی ہوئی تھی جب اعلان کراے گئے کہ حُکم کو بد صورت ، بونے اور مسخ شدہ چہروں والے نوکر چاہیے۔ ہمیں تو اپنا چولہا جلانا تھا ہمیں کیا لینا دینا کہ کسی کے دل میں انتقام کی آگ کیوں لگی ہے؟ یہاں اچھا کھانے پہننے کو ملتا ہے، اچھی تنخواہ ملتی ہے۔ احسان ہے اُن کا ،اُن کی وجہ سے کچھ تسلی ہے کہ ایک ہم ہی اِس دنیا میں عام نہیں، ہمارے ساتھ ہمارے جیسے اور بھی ہیں۔‘‘چاچی شگو نے اداس لہجے میں کہا اور بنا کوئی جواب سنے کمرے سے چلی گئیں۔ چاچی شگو کو رنجیدہ کر دینے پر صاحبہ کو تھوڑا افسوس ہوا تھا ۔ساری باتوں کے باوجود وہ اپنے مقصد میں کامیاب نہ ہو پائی تھی۔وہ راز جو وہ جاننا چاہتی تھی ابھی تک گپت تھا۔

<span style=”font-size:14pt;font-family:arial;font-variant-numeric:normal;font-variant-east-asian:normal;vertical-align:baseline;white-

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.