کبھی تم خوبصورت تھے
دیکھو وقت نے کتنی بیدردی سے
تمہارے نازک نقوش مسلے ہیں
تمہارے کومل بدن کو بھی
سمے نے مات دے دی ہے
ارے ٹھہرو مجھے یاد آیا
سمے کا کوئی قصور نہیں
وقت کا کوئی موڑ نہیں آیا تم پر
بس مجھے ہی اب یاد آیا
تم تو انا کے پجاری تھے
محبت کر تو لیتے تھے
مگر محبت چاہتے کب تھے
اسے تم پا تو لیتے تھے
لیکن اسے نبھاتے کب تھے
تمہیں بس “میں” کی چاہ تھی
اسی “میں” نے ذرا دیکھو
تمہیں برباد کر ڈالا
خستہ حال کر ڈالا
مگر پھر بھی تم نے
محبت کی اس جنگ میں
محبت کو ہرایا ہے
اور اپنی “میں” کی خاطر
انا کی فتح کا پرچم
اپنے خالی کھوکھلے وجود پر
خود ہی لہرایا ہے
کیوں کے تمہیں تو پیار ہے “میں” سے
انا بھی تم کو پیاری ہے
محبت بھاڑ میں جائے
“انا” بس سب پہ بھاری ہے

_______________

کلام: قرةالعین فرخ

ماڈل: عمیر

فوٹوگرافی و کور ڈیزائن: صوفیہ کاشف