بارش __________نصیر احمد ناصر

بارش آتی ہے اور ۔۔۔۔۔
سڑکیں، پیڑ، مکان، پرندے
جنگلے، لان، ورانڈے، ٹیرس
گملے، بیلیں، پھول، دریچے
لفظ، کتابیں، نظمیں، باتیں
خواب اور چہرے
دھوپ اور سائے
سب کچھ بھیگنے لگتا ہے
یادیں جل تھل ہو جاتی ہیں
عمریں پَل پَل ہو جاتی ہیں
نِرجل آنکھیں
پانی سے بھر جاتی ہیں،
نِرمل ہو جاتی ہیں ۔۔۔۔

بارش رکتی ہے اور ۔۔۔۔۔
تیز ہوا چلنے لگتی ہے!

__________________

کلام:نصیر احمد ناصر(اسلام آباد،1980ء)

فوٹوگرافی و کور ڈیزائن: صوفیہ کاشف

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.