بارش __________نصیر احمد ناصر

بارش آتی ہے اور ۔۔۔۔۔
سڑکیں، پیڑ، مکان، پرندے
جنگلے، لان، ورانڈے، ٹیرس
گملے، بیلیں، پھول، دریچے
لفظ، کتابیں، نظمیں، باتیں
خواب اور چہرے
دھوپ اور سائے
سب کچھ بھیگنے لگتا ہے
یادیں جل تھل ہو جاتی ہیں
عمریں پَل پَل ہو جاتی ہیں
نِرجل آنکھیں
پانی سے بھر جاتی ہیں،
نِرمل ہو جاتی ہیں ۔۔۔۔

بارش رکتی ہے اور ۔۔۔۔۔
تیز ہوا چلنے لگتی ہے!

__________________

کلام:نصیر احمد ناصر(اسلام آباد،1980ء)

فوٹوگرافی و کور ڈیزائن: صوفیہ کاشف

Advertisements