سمندر رازداں میرا اگر ہوتا ______________نصیر احمد ناصر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سمندر رازداں میرا اگر ہوتا

تو سب سچائیاں اپنی اسے میں سونپ دیتا

اور لکھتا ساحلوں پر

سیپیاں چنتی ہوئی

ان لڑکیوں کی داستاں

جن کے سنہری جسم

خوابوں کے جزیروں کی طرح تھے

مگر جن کے مقدر

ریت پر ابھری لکیروں کی طرح تھے

سمندر رازداں میرا اگر ہوتا

تو سب تنہائیاں اپنی اسے میں سونپ دیتا

اور چلتا تھام کر انگلی ہوا کی

دور جاتے راستوں پر

جن سے کوئی لوٹ کر آتا نہیں

سمندر رازداں میرا اگر ہوتا

تو سب گہرائیاں اپنی اسے میں سونپ دیتا

اور اترتا

پانیوں کی نیلگوں وسعت کے سینے میں

زمیں کشتی بنا کر

آسماں کو بادباں کرتا

سفر کا دکھ بھرا لمحہ

تمہارے اور اپنے درمیاں کرتا

سمندر رازداں میرا اگر ہوتا

___________________

کلام: نصیر احمد ناصر

فوٹوگرافی و کور ڈیزائن: صوفیہ کاشف