ذندگی کا آپ کے نام خط________سمیرا حمید

زندگی کااپنے دوست کے نام خط
آپ کے نام۔۔۔۔۔۔
زندگی۔۔۔۔۔۔
زندگی۔۔۔۔۔۔یہ ایک ایسا دوست ہے ، جو آپ کو دوست رکھتا ہے ۔یہ ہر روز آپ کو ”زندگی”کا پیغام دیتاہے ۔ ہر دن آپ کے نام”محبت بھرا” خط لکھتاہے۔ہر لمحہ آپ کے لیے اُمید اور یقین کا گیت گاتاہے۔یہ آپ سے ” زندگی کی مٹھاس” میں کلام کرتاہے۔ اس کی زمین سر سبز ہے اور آسمان”بہار”۔
٭ زمین کو کتنے بھی موسم نصیب ہوں۔۔۔۔۔۔زندگی کو ایک ہی موسم نصیب ہے۔۔۔۔۔۔”زندگی ” کا۔۔۔۔۔۔
٭ انسان کو کتنی بھی سانسیں نصیب ہوں۔۔۔۔۔۔زندگی کو ایک ہی سانس نصیب ہے۔۔۔۔۔۔”زندگی ”کی۔۔۔۔۔۔
٭ آپ کے ہاتھ کتنے بھی دکھ ہوں، کتنی بھی تکلیفیں ، مشقتیں،۔۔۔۔۔۔زندگی کو ایک ہی حکم نصیب ہے۔۔۔۔۔۔”زندگی” کا۔۔۔۔۔۔
زندگی۔۔۔۔۔۔زندگی۔۔۔۔۔۔اور زندگی۔۔۔۔۔۔
موت کے حکم سے پہلے ہر سانس”زندگی”۔۔۔۔۔۔ہر لمحہ” زندگی”۔۔۔۔۔۔ہر آس ”زندگی”۔۔۔۔۔۔
سورج آپ سے کہتا ہے۔۔۔۔۔۔
سورج نیچے آتاہے تو ستارے اُوپر آجاتے ہیں۔۔۔۔۔۔روشنی کے قمقمے۔۔۔۔۔۔اندھیرے کا دلفریب منظر۔۔۔۔۔۔ کائنات کے ہر رنگ کو زندگی سمجھو۔ رات کا مطلب یہ نہیں کہ اندھیرہ چھا گیا اور اب کبھی دن ظاہر نہیں ہو گا ۔ اب کبھی روشنی نہیں ہو گی۔ اس کا مطلب ہے ”روشنی اسی اندھیرے سے”بر آمدہو گی، جسے عارضی طور پر حاوی کر دیا گیا ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ رات کی عبادت کا آغاز کیا جائے۔۔۔۔۔۔
صبر۔۔۔۔۔۔
صبر۔۔۔۔۔۔
صبر۔۔۔۔۔۔
دعا، یقین، امید، بلند ہمتی۔۔۔۔۔۔اللہ کی رضا میں راضی۔۔۔۔۔۔
اس کا مطلب ہے کہ رات کی ”عبادت”تمہیں نصیب کی گئی ہے۔۔۔۔۔۔مایوسی کے اندھیرے ، ان میں بلند ہمتی، تمہاری بلندی ہے۔۔۔۔۔۔
رات۔۔۔۔۔۔اندھیرہ۔۔۔۔۔۔یہ چیزوں کو چھپا لیتا ہے۔۔۔۔۔۔روشنی چیزوں کو نمایاں کرتی ہے۔ اس لیے تمہارا رب چاہتاہے کہ اب تم وہ سب دیکھو جسے دن کی روشنی نے چھپا کر رکھا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔تمہارا سکھ، تمہاری آسائشیں، تمہارا سکون، تمہاری کامیابیاں۔۔۔۔۔۔یہ بہت سی چیزوں کو چھپا کر رکھتاہے۔
٭ ایک چیز کا چلے جانا۔۔۔۔۔۔دوسری شے کا موجود ہونا ہے۔۔۔۔۔۔
٭ ایک چیز کا چھپ جانا۔۔۔۔۔۔دوسری شے کا ظاہر ہونا ہوتاہے۔۔۔۔۔۔
روشنی کے چلے جانے سے ، اندھیروں کے چھا جانے سے اتنا خوف کیوں؟ایسے سہم جانا کیوں؟اتنا واویلا کس لیے؟سکھ کے بعد دکھ آئے ۔۔۔۔۔۔کامیابی کے بعد ناکامی، یا صرف ناکامیاں۔۔۔۔۔۔صرف دکھ۔۔۔۔۔۔صرف مشقتیں۔۔۔۔۔۔آزمائشیں۔۔۔۔۔۔ تو سمجھ جاؤ کہ اب تمہیں تمہارا رب وہ دکھانا چاہتا ہے جو چھپا ہوا تھا۔رات کی عبادتیں افضل ہیں۔ رات کی ریاضیتیں افضل ترین ہیں۔کیا پھر بھی تمہیں رات ناپسند ہے۔ وہ تمہاری زندگی میں ہو یا دنیامیں۔۔۔۔۔۔؟وہ معمالات میں ہو یا دل میں۔۔۔۔۔۔وہ گھر میں ہو یا روح میں۔۔۔۔۔۔کیا تمہیں یہ عبادت ناپسند ہے؟
٭ تنہائی کی عبادتیں محبوب ہیں اور خاموشی کی انتہائیں محبوب ترین۔۔۔۔۔۔
٭ اگر تم اکیلے ہو۔۔۔۔۔۔ تنہاء ہو۔۔۔۔۔۔خاموش ہو چکے ہو۔۔۔۔۔۔ تو برا کیا ہے؟
روشنی کا گم ہو جانا۔۔۔۔۔۔کیا یہ اس لیے تو نہیں کہ تم دل کی آنکھ کھول لو؟ تم اپنے رب کی وہ پہچان حاصل کر و جو دن میں ممکن نہیں ہے۔۔۔۔۔۔کیا ہر جان مشقت سے نہیں گزرتی؟کیا ہر روح کو جد و جہد نہیں کرنی پڑتی؟کیا بلندی انہیں ہی نصیب نہیں ہوتی ، جو پستی سے اٹھتے ہیں ؟ کیا عروج اس کا ہی نصیب نہیں جو ”زوال” کو صبر، ورنہ ہمت سے کاٹ چکا ہو؟کیا آسمان اس کا نہیں ، جو زمین پر عرش والے کے رحم کے یقین کے ساتھ زندگی گزار رہا ہو۔۔۔۔۔۔؟ جو اس کے اختیار کو بھول جانے والا نہیں۔۔۔۔۔۔
٭ رات۔۔۔۔۔۔اسے اہم سمجھو۔۔۔۔۔۔
٭ اندھیرہ۔۔۔۔۔۔یہ قطعا مہلک نہیں۔۔۔۔۔۔
٭ رات آئی تو صرف اس لیے کہ وہ نیا دن لا سکے۔۔۔۔۔۔
دکھ۔۔۔۔۔۔تکلیف۔۔۔۔۔۔مشقت۔۔۔۔۔۔آزمائش۔۔۔۔۔۔اس لیے کہ صبر مقصود ہے۔ تمہاری ہمت مطلوب ہے۔ پتھر کو توڑ کر نہر نکالی جا رہی ہے۔ زمین کھود کر ہیرا نکالا جار ہاہے۔ زمین کا سینا پھٹتا ہے تو سبزا اُگتاہے۔۔۔۔۔۔کھیت۔۔۔۔۔۔باغ۔۔۔۔۔۔درخت۔۔۔۔۔۔بیج کا سینا شق ہوتاہے تو”پھل، پھول” پھوٹتے ہیں۔۔۔۔۔۔
٭ تمہارا سینہ شق کیا ہے تو اس سینے سے ”پھول”مقصود ہے۔۔۔۔۔۔
٭ تمہارا دکھ پہاڑ ہے۔۔۔۔۔۔چٹان ہے۔۔۔۔۔۔ تو اس سے ”ہیرا”مطلوب ہے۔۔۔۔۔۔
سورج۔۔۔۔۔۔یہ ہر نئی رات کے ساتھ۔۔۔۔۔۔نئے دن کے لیے ہے۔۔۔۔۔۔
دن۔۔۔۔۔۔روشنی۔۔۔۔۔۔
روشنی۔۔۔۔۔۔یہ ہر شے کو نمایاں کر دیتی ہے۔آنکھیں ہر شے کو دیکھتی ہیں۔نشانیاں دن میں تلاش کی جاتی ہیں۔ معمولات دن میں طے پاتے ہیں، جو ہمارے اعمال، ہماری کار گزاری، ہمارے درجات طے کرتے ہیں۔و ہ مٹی کے ساتھ مٹی ہوتا کسان ہو یا پھر مسند پر بیٹھا مفکر۔۔۔۔۔۔وہ علم کا طالب ہو یا حلال رزق کی غرض سے نکلا مسافر۔۔۔۔۔۔
٭ مشقت۔۔۔۔۔۔جد و جہد۔۔۔۔۔۔کوشش۔۔۔۔۔۔اسے دن کے لیے۔۔۔۔۔۔روشنی میں مخصوص کیا گیاہے۔۔۔۔۔۔
٭ اپنی زندگی کی روشنی کے لیے کوشش کریں۔۔۔۔۔۔جد و جہد کریں۔۔۔۔۔۔
دیکھیں کہ جب صبح ہوتی ہے تو پرندے حمد و ثنا میں مصروف ہو جا تے ہیں۔ آسمان نکھر آتاہے۔۔۔۔۔۔وہ سفید۔۔۔۔۔۔وہ نیلا۔۔۔۔۔۔وہ آپ کے رب کی رحمت لیے آپ پر جھک آتاہے۔۔۔۔۔۔
٭ روشنی اندھیرے کے بعد، اندھیرے کے ساتھ آتی ہے،اس حقیقی وعدے کی طرح جو ہر حال میں”ایفا” کیا جاتاہے۔۔۔۔۔۔
٭ حلف کی طرح جسے کسی صورت”تلف” نہیں کیا جاتا۔۔۔۔۔۔
انسان کا پتلا بنایا گیا تھا تو پہلے اسے ”اندھیرہ” سے روشناس کروایا گیاتھا۔ ہم انسانوں نے روح سے پہلے اندھیرے کے جہانوں کا سفر کیا ہے۔پھر اس اندھیرے کو روشنی دینا پسند کیا گیا۔۔۔۔۔۔زندگی۔۔۔۔۔۔یہ ”روشنی” سے شروع ہوئی ہے۔۔۔۔۔۔اس میں نور پھونکا گیا۔دیکھیں کہ کیسے ہمار رب نے ہمارے لیے’نور” کو پسند کیا۔
سبزے کا جہاں گواہ ہے کہ تمہارا رب، تمہیں خوبصور ت دیکھنا چاہتاہے۔۔۔۔۔۔خوش باش۔۔۔۔۔۔اسے تمہاری شکلوں سے زیادہ تمہارے دلوں کی فکر ہے۔۔۔۔۔۔دل کہ وہ زنک آلود نہ ہو جائیں۔۔۔۔۔۔دل کہ وہ افسردگی اور مایوسی میں گھیرے نہ رہیں۔۔۔۔۔۔دل کہ وہ اس کی رحمت کو بھول نہ جائیں۔۔۔۔۔۔زمین کے سینے پر اُگا سبزا۔۔۔۔۔۔دنیا میں کسی بھی دوسرے رنگ سے زیادہ پھیلا ہوا یہ سبزا،گواہ ہے کہ رب کائنات تمہیں” پر بہار” دیکھنا چاہتاہے۔ وہ تمہیں ہر ا بھر ا، کامیاب دیکھنا چاہتاہے۔
”اور اللہ کو (اللہ کی نعمتیں)کثرت سے یاد کیا کرو تاکہ تم فلا ح پاؤ” ( القرآن)
تو تم اللہ کی دی زندگی کی نعمت کو یاد رکھو، اور فلاح پا جاؤ۔جب وہ خاک سے بنائے پتلے کو ایسا” پر بہار” کر سکتا ہے، اسے زندگی اور نور دے سکتاہے ، تم تمہارے بنجر دکھوں اور مشکلوں کو گلزار کیسے نہیں کر سکتا؟تمہیں کیوں لگتاہے کہ تمہاری زندگی صحرا ہو چکی ہیں اور اب یہاں کبھی برسات نہیں ہو گی۔ کبھی پھوار نہیں پڑے گی۔ زندگی اگر آگ ہو چکی ہے تو اب کبھی”راحت” نہیں ہو گی؟زندگی اگر ”زخم” ہو چکی ہے تو کیا کبھی ”دوا اور شفائ” نہیں ہو گی؟
پہچانیں خود کو۔۔۔۔۔۔قد ر کریں اپنی۔۔۔۔۔۔
دیکھیں کہ کبھی کسی پرندے نے مایوسی کا گیت نہیں گایا ۔ وہ افسردہ صورت اور موت کے قریب نہیں ہوا۔ ایک ٹھنڈے برفیلے پانی میں پھنسا، بیمار پرندہ بھی آخری سانس تک زندگی کے لیے جدو جہد کرتاہے۔ چیونٹیاں۔۔۔۔۔۔کیسے ایک ایک دانہ ڈھونڈتی پھرتی ہیں۔ پھر ان دانوں کو اٹھانے کی مشقت سے گزرتی ہیں۔۔۔۔۔۔ انہیں کائنات تسخیر نہیں کرنی۔۔۔۔۔۔انہیں تو بس زندگی فتح کرنی ہے کیونکہ یہی ان کے رب کی رضا ہے۔۔۔۔۔۔ سمندر کے اندھیروں میں تیرتا ہر وجود،ہر لمحہ زندگی و موت کی کشمکش سے گزرتاہے۔۔۔۔۔۔بڑی مچھلی آتی ہے اور ایک لقمے میں ہزاروں چھوٹی مچھلیوں کو نگل جاتی ہے۔ پھر بھی چھوٹی مچھلیاں اپنی زندگی کی تگ و دو میں مصروف رہتی ہیں۔ وہ سمندری چٹانوں کے پیچھے چھپ جاتی ہیں۔ وہ بڑی مچھلی کی آمد پر خود کو بچانے کی سر توڑ کوشش کرتی ہیں۔۔۔۔۔۔وہ خود کو زندگی کے ساتھ جوڑ کر رکھتی ہیں۔۔۔۔۔۔انسان ان چھوٹی مچھلیوں سے تو کہیں زیادہ ارفع واعلی ہے۔۔۔۔۔۔
٭ انسان۔۔۔۔۔۔اسے ہر روز کسی بیرونی ”شکاری” کا سامنا نہیں کرنا پڑتاہے۔۔۔۔۔۔
٭ انسان۔۔۔۔۔۔اسے بس خود کو، خود ہی شکار کرنے سے باز رکھنا ہوتاہے۔۔۔۔۔۔
بڑے جانور چھوٹوں کو کھا جاتے ہیں،چھوٹے اپنے سے چھوٹوں کو، پرندے حشرات کھا جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔ہر زی روح دوسرے کی خوارک ہے ، ایک بس انسان ،اس پر کسی کو مسلط نہیں کیا گیا۔۔۔۔۔۔آپ آزاد ہیں۔۔۔۔۔۔آپ خودمختار ہیں۔۔۔۔۔۔آپ طاقتور ہیں۔۔۔۔۔۔پھر آپ کو زندگی کے لیے جدو جہد کرتے ہوئے تھکن کیوں ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔؟آپ اتنی جلدی ہمت کیسے ہا ر جاتے ہیں؟ کیسے آپ کو ”سب ختم” ہو چکا ہے ، دکھائی دینے لگتا ہے۔؟
٭ زندگی کی آنکھوں کو اندھا ہونے سے بچانے کی کوشش کریں۔زندگی کا علم بلند رکھیں۔۔۔۔۔۔اتنا بلند کہ آسمان جھک آئے۔۔۔۔۔۔
٭ زندگی کو فتح کریں۔۔۔۔۔۔ایسے کہ ہر شکست اپنا رخ موڑ لے۔۔۔۔۔۔
زندگی۔۔۔۔۔۔ یہی ہمارے رب کی رضا ہے۔یہی ہماری فلاح ہے۔ اسی میں ہماری نجات ہے۔کائنات کی ہر بلندی سے زیادہ انسان کے مقام کو بلند کیا گیا ہے۔ اس مقام کو پہچانیں۔کوئی ذی روح انسان کی برابری نہیں کر سکتی۔زندگی ہرروز ہمیں جو پیغام دیتی ہے ، اسے سننے، سمجھنے اور اس پر عمل کرنے کی کوشش کریں۔ہماری ہمت کے ایک قطرے کو اللہ سمندر کر دے گا۔
٭ ہماری جرات کو آسمان والا۔۔۔۔۔۔بے مثال کر دے گا۔۔۔۔۔۔
زندگی المیہ نہیں۔۔۔۔۔۔زندگی قصہ کہانی نہیں۔۔۔۔۔۔زندگی”رضا” ہے،اس رب کی جس نے ہمیں ہر ذی روح سے آگے، اور ہر ذی روح کو ہم سے پیچھے رکھا ہے۔۔۔۔۔۔
زندگی۔۔۔۔۔۔یہ تمہیں ہر روز ایک خط لکھتی ہے۔۔۔۔۔۔اور کہتی ہے۔۔۔۔۔۔
”زندگی بندگی کی خلافت۔۔۔۔۔۔اور تم اس کے ”خلیفہ” ۔۔۔۔۔۔
اللہ نے زندگی کو اتنا پسند کیا کہ اسے شروع کیا(عالم ارواح) آگے بھیجا(دنیا)اور پھر لافانی کر دیا(جنت)۔۔۔۔۔۔
اللہ نے زندگی کو اتنا پسند کیا کہ ”توبہ” کا وجود رکھا۔۔۔۔۔۔
اللہ نے زندگی کو اتنا پسند کیا کہ اپنے ”رحم” کو اپنے غضب پر غالب رکھا۔۔۔۔۔۔
اتنا پسند کہ۔۔۔۔۔۔اپنے محبوب ؐ کو تمہارے لیے رحمت العالمین بنا کر بھیجا۔۔۔۔۔۔
”زندگی معجزہ ہے اور آپ اس معجزے کے امین”
٭۔۔۔۔۔۔٭۔۔۔۔۔۔٭

تحریر:
سمیراحمید

فوٹوگرافی و کور ڈیزائن:

صوفیہ کاشف

Advertisements

2 Comments

  1. سمیرا حمید کو صوفیہ لاگ پہ خوش آمدید ـ ماشااللہ صوفیہ لاگ کی صوفیہ کاشف کی محنت رنگ لا رہی ہے ـ سمیرا حمید اورـصوفیہ کاشف دونوں کو مبارک باد ـ

    Liked by 1 person

Comments are closed.