ساون آنکھیں

میگھا میگھا ساون آنکھیں
بھیگی بھیگی جاون آنکھیں
جانے کیسا یہ روگ لگا ہے
روٹھی ہیں من بھاون آنکھیں
سیتا جیسے کھوئی کھوئی
کون تھا آخر عشق دروہی
کس کی تھیں وہ راون آنکھیں
آنکھیں پُرنم ‘ آنکھیں شبنم
آنکھیں سارنگ آنکھیں سرگم ـــــ
آنکھیں برسیں چھم چھم چھم چھم
آنکھیں گھائل ‘ آنکھیں بے دم
آنکھیں چھلکی چھلکی چھاگل ‘
آنکھیں احمق ‘ آنکھیں پاگل
جن کو دیکھیں باون آنکھیں
لیکن دکھ تو یہ بھی ہے اک
کوئی نہ یہ آنسو پونچھے
نہ ہی غم کی بابت پوچھے
بن موسم برسات ہے کیسی ؟
دل پہ چھائی رات ہے کیسی؟
ایسی ہیں مہاون آنکھیں
سنگل ‘ سنگدل ‘ ہاون آنکھیں
میگھا میگھا ساون آنکھیں
بھیگی بھیگی جاون آنکھیں

_______________

کلام: ثروت نجیب

فوٹوگرافی و کور ڈیزائن: