غزل________نوثیقہ

خزاں کی رت میں ڈھلا ھے بہار کا موسم
نجانے کب ڈھلے گا انتظار کا موسم

اڑا کے نیند دے دیئے ھیں رت جگے ھم کو
یہ کس نے چھین لیا ھے قرار کا موسم

چلا جو سلسلہ اک، راہ میں رکا ھی نہیں
رہا ھے چار سو گرد و غبار کا موسم

جدا ھیں راستے اپنے الگ ھے منزل بھی
ھمارے پاس کہاں اختیار کا موسم

مجھے امید نہں پر یہی دعا ہے مری
کہ لوٹ ائے تیرے اعتبار کا موسم۔

_______________

کلام:نوثیقہ سید

ٹائیٹل کور: صوفیہ کاشف

Advertisements

7 Comments

Comments are closed.