مہلت__________از محمد انس حنیف

🌷

اگر تم گناہ پہ گناہ کرتے جارہے ہو…لیکن اس کے باوجود وہ خدا رزق عطا کر رہا یے.
. تمہارے بے حساب لاگنت گناہوں کے باوجود اس نے تمہارا چہرہ نہیں بگاڑا ..
تمہاری آنکھیں ..
ہاتھ پاؤں سب کے سب سلامت ہیں..
.خدا کی رحمتوں اور نعمتوں میں کمی نہیں آرہی…
تو جان لو وہ تمہیں مہلت دے رہا ہے…
مہلت پہ مہلت…
بار بار…
کیونکہ وہ خدا ہے..
وہ پاک ہستی ابن آدم سے بہت محبت کرتی ہے…وہ بار بار تمہارے پلٹ آنے کی امید پہ تمہیں مہلت دے رہا ہے کہ شاید میرا پیارا بندہ پلٹ آئے……
لیکن یاد رکھو! ایک وقت آئے گا جب مہلت ختم ہو جائے گی…اور جانتے ہو جب مہلت ختم ہو جائے تو کیا ہوتا ہے؟؟
تب انسان ایک ایسی دلدل میں پھنس جاتا ہے جس سے چھٹکارا ناممکن ہوتا ہے..اس دلدل میں پھنسے ہوئے انسان اپنے ان گناہوں کو یاد کرتا ہے جن کو کبھی اس نے بہت غرور سے کیا ہوتا ہے… اور وہ سارا غرور گلے میں کسی پھندے کی طرح گرہے ڈال لیتا ہے.. سانس رک سا جاتا ہے
…مال …دولت..دوستوں کا ہجوم…جنسی لذت…جو کبھی زندگی کا سرور لگتے تھے پہلی مرتبہ ایک عذاب کی طرح لگنا شروع ہوجاتے ہیں..کسی پھانس کی طرح چبھنے لگتے ہیں …تب انسان اس دلدل سے رہائی چاہتا ہے…
مگر مہلت باقی نہیں رہتی
اور اس دلدل میں دھنسے ہوئے انسان کو پہلی مرتبہ سمجھ آتا ہے کہ جو لاحاصل ہوتا ہے وہ لاحاصل ہی رہتا ہے…
مال دولت
دوست یار
ہر کوئی دامن چھڑا لیتا ہے…
اور جب مہلت ختم ہو جائے
تب تو خدا بھی ہاتھ چھوڑ دیتا ہے. ….

________________

مصنف:

محمد انس حنیف

فوٹوگرافی: صوفیہ کاشف

Advertisements

2 Comments

Comments are closed.