نظم

جگنو جگنو راہیں کر دوں
حلقہ حلقہ باہیں کر دوں

روشن روشن پیشانی پہ
خوشحالی کا غازہ بھر دوں

لب پہ تیرے سجا کے نغمے
رقصاں امبر دھرتی کر دوں

عشق ہی میرا سرمایہ ہے
تو دل مانگے’ جاں میں سر دوں

دنیا محبس ہے تیرے بن
الجھا الجھا لگتا ہے گردوں

تارہ تارہ شامیں میری
سرگی سرگی تم کو کر دوں

روشن داں کا کیا کرتے ہو
آؤ تمکو سورج گھر دوں

آنکھیں تیری کالی کعبہ
ان میں کیسے آنسو بھر دوں

کھول میرے سینے کا پنجر
تم کو تیرا ذاتی گھر دوں

پیروزی چِپکے تم سے
خوشبختی کا ایسا در دوں

_______________

شاعرہ:ثروت نجیب

Advertisements

2 thoughts on “نظم

Comments are closed