نظم

جگنو جگنو راہیں کر دوں
حلقہ حلقہ باہیں کر دوں

روشن روشن پیشانی پہ
خوشحالی کا غازہ بھر دوں

لب پہ تیرے سجا کے نغمے
رقصاں امبر دھرتی کر دوں

عشق ہی میرا سرمایہ ہے
تو دل مانگے’ جاں میں سر دوں

دنیا محبس ہے تیرے بن
الجھا الجھا لگتا ہے گردوں

تارہ تارہ شامیں میری
سرگی سرگی تم کو کر دوں

روشن داں کا کیا کرتے ہو
آؤ تمکو سورج گھر دوں

آنکھیں تیری کالی کعبہ
ان میں کیسے آنسو بھر دوں

کھول میرے سینے کا پنجر
تم کو تیرا ذاتی گھر دوں

پیروزی چِپکے تم سے
خوشبختی کا ایسا در دوں

_______________

شاعرہ:ثروت نجیب

کور ڈیزائن: صوفیہ کاشف

2 Comments

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.