غزل

گردشِ جاں میں رہے چاند ستارے یارو ہم نے ایسے بھی کئی دور گزارے یارو ہم نے رکھا ہی نہیں سود و زیاں کا سودا ہم نے سہنے ہیں محبت میں خسارے یارو رنج دیتے سمے اتنا تو فقط سوچتے تم ہم بھی تھے ماں کے بہت زیادہ دلارے یارو اور ہم ہنس کے سبھی […]

Read More…