سفِر حجاز اقدس اور میں

قسط نمبر 1 ( بلاوا ) __________________ میرے داورا میرے کبریا کروں حمد تیری میں کیا بیاں تیری منزلوں میں … More

Bars!

In home when it’s raining outside,alone,is like being behind the bars!

“آخر کب تک”

(دشتِ برچی کابل کے معصوم شہداء کے نام! ) لہو سے لتھڑے بکھرے اوراق ــــ ظلم کی آنکھ مچولی میں … More

   “یادش بخیر “

نہیں خبر سکوں میرا کس قریہِ جاں میں کھو گیا رنجشیں ہی رنجشیں ملامتیں ‘ پشیمانیاں الجھنوں میں گِھرا یہ … More

“کچھ اپنے خیالات کے بارے میں”

خیال ہیں مرے یہ، عجب ابہام ہیں مہمل ہیں کبھی،کبھی الہام ہیں… اپنی ذات کا ہی ہیں کبھی استہزاء کبھی … More