جشن ________سعدیہ بتول

اس دھرتی کے لوگوں پہ
اک دور قہر کا گزرا تھا
جس دور میں ہندو مسلم پر
وحشت اور نفرت طاری تھی
اس وحشت نے اس نفرت نے
پاک و ہندکی گلیوں میں
وہ خون بہائے الاماں !!!
وہ زخم دکھائے الاماں !!!
اس دھرتی کی سینے پہ
افرنگی سیاست نے
برسوں شاہی کی لیکن
وہ وقت بھی آیا جس لمحے
زندانوں کے تالے ٹوٹ گئے
جو ساتھ ہمیشہ رہتے تھے
وہ ساتھ بھی آخر چھوٹ گئے
اب کہنے کو آزاد ہیں ہم
اس دھرتی کے بٹنے پہ
شاد ہیں ہم ،آباد ہیں ہم
اس موقعے پہ اہل وطن
جشن تو آخر بنتا ہے
ہر سال اس تاریخ کے دن
جشن تو آخر بنتا ہے
اک جشن تو آخر بنتا ہے !!!

“سعدیہ بتول”

Advertisements

One thought on “جشن ________سعدیہ بتول

  1. Marvellous depiction of pre-Pak history.
    Loved to read all that with new words.
    We just need to remember
    پاکستان کا اک مقصد تھا،
    مقصد پاکستان نہیں تھا۔۔۔

    Liked by 1 person

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s