غزل_______رابعہ بصری

کتاب کب سے کھلی ہوئی ہے
یہ چائے کب کی پڑی ہوئی ہے

وہ سبز چادر ذرا اوڑھا دو
بے چاری کب سےتھکی ہوئی ہے

محبتوں سے بنی ہوئی تھی
منافقوں کی ڈسی ہوئی ہے

وہ ایک صورت جو آئینہ ہے
وہ آئینوں سے ڈری ہوئی ہے

عجیب دل کہ سہم گیا ہے
بری نظر جو پڑی ہوئی ہے

_______________

رابعہ بصری

وڈیو دیکھیں:ہمالیہ کی خموشی کیا کہتی ہے؟

Advertisements

2 thoughts on “غزل_______رابعہ بصری

Comments are closed