آدم ذاد۔۔۔۔۔۔۔۔۔اُم کلثوم

بس جاؤں کہیں بیاباں میں
شورش سے بھاگ جاؤں
مرہم جو بن سکے مِرا
وہ لفظ ڈھونڈ پاؤں…
کیسا ہجوم ہے جو
بے سمت ہے رواں دواں
بے خبر اس بات سے…
کہ جانا ہے کہاں
یہ خوف ہے دلوں میں….
کہ رستے تو ہر طرف ہیں
یقیں نہیں کسی کو
کہ منزل ہے کہاں…
جکڑے ہوئے ہیں پاؤں
زنجیر زر میں سب کے
اِک دردِ مسلسل ہے
رہائی کوئی دلادے
باغِ عدن کا باسی…..
کیا میں وہی آدم ہوں
کیا دانۂ گندم ہی تھا
عتاب کابہانہ………

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شاعرہ:ام کلثوم

فوٹوگرافی:صوفیہ کاشف
ینگ وومن رائٹرز فورم اسلام آباد

وڈیو دیکھیں: ہمالیہ کا سکوت

Advertisements

3 Comments

Comments are closed.