غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رابعہ بصری

وہ میرے گاؤں میں ٹھہرا نہ اپنے گھر میں رہا
عجیب شخص تها میرے لیے سفر میں رہا

اسے ہی پوچھتے ہیں تم نے کیا کیا بابا
جو اپنے بچوں کی خاطر نگر نگر میں رہا

وہی تھا دھوپ کی شدت جو ہنس کے سہتارہا
تُو اپنا تخت لئے سایہ ء شجر میں رہا

ہماری آدھی گواہی تھی سو ہمی ملزم
وہ جرم کرکے بھی ارباب معتبر میں رہا

غمِ حیات نے سب کچھ بھلا دیا ، ورنہ
دل ایک عمر تیری یاد کے سحر میں رہا

کہیں کسی نے لٹا دی خلوص کی دولت
مگر ہوس کا پجاری ، زمین و زر میں رہا

میں جگنوؤں کے تعاقب میں دور آ نکلی
وہ ہجرتوں کا ستایا ہوا تھا گھر میں رہا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رابعہ بصری

وڈیو دیکھیں:ہمالیہ کی خموش خوبصورت گردی

Advertisements

3 Comments

Comments are closed.