غزل۔۔۔۔۔۔۔ابصار فاطمہ

لگادو آئینے ہر سو مجھے سنورنا ہے
نہ چھیڑو فکر کا موضوع مجھے سنورنا ہے

بچالی آج پھر تقدیس چار دیورای
اک اور مر گئی مہہ رو، مجھے سنورنا ہے

لگیں گے داغ مشقت کے ناگوار اسے
تو کرلوں ہاتھ حِنارو , مجھے سنورنا ہے

سیاسیات، علوم و فنون سب بے کار
بس اب ہے زیست کا موضوع, مجھے سنورنا ہے

مجھے بنا دیا آرائشی سا ساماں جو
ہوا اڑان پہ قابو، مجھے سنورنا ہے

میں زن ہوں مجھ سے ہے تصویر کائنات میں رنگ
میرا ہے بس یہی جادو ، مجھے سنورنا ہے؟

دھواں دھواں ہے فضا، تلخ آب و دانہ ہے
مٹاتا جاتا ہوں ذی روح، مجھے سنورنا ہے

ابصار فاطمہ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔فوٹوگرافی: فرحین خالد

وڈیو دیکھیں:ابوظہبی کا ایک خوبصورت ڈوبتا سورج

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.