ایک نظم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رابعہ بصری

🕯ہم درِ یار سے دھتکارے ہوئے خانہ بدوش
دشتِ غربت میں پشیمانئِ رنجِ فراق
چاکِ داماں میں فقط شامِ غریباں لے کے
اپنی بکھری ہوئی یادوں کی، ایک پیوند زدہ پوٹلی تھامے
جن میں ٹوٹے ہوئے خوابوں کے سوا کچھ بھی نہیں
زینہُ شب سے جو اترے تو ہمیں یاد آیا
اپنی چند قیمتی چیزیں تو وہیں چھوڑ آئے
تیری پوشاک سے آتی ہوئی ظالم خوشبو
آنکھ سے ٹوٹ کے مٹی میں ملا وہ آنسو
تیری آواز پہ دل کی ہلچل
تیری آہٹ ،تیرے قدموں کی وہی چاپ
( کہ جو دستکِ جاں ہوتی تھی)
بھول کے اپنا وہ کاسہ بھی وہیں چھوڑ آئے
اففف اسی قیدِ مسلسل کے مہ وسال سبھی
(آج تک گِن نہ سکے)
ہاں وہی سادہ طبیعت اپنی
آج تک خیر ہے کیا ، شر ہے کیا
کبھی پہچان نہ پائے
وہ طبیعت بھی وہیں رکھ آئے
اور وہ ایک دعا
جس کا اول بھی تو ہی تھا اورتو ہی آخر تھا
وہی اک نیلی سی جلد میں لپٹی فائل
جس میں تصویر تھی
چند سوکھے ہوئے پھول
ایک آدھ مور کا پر اور وہ ٹوٹی ٹہنی
تیرے ہاتھوں سے لکھا ایک محبت نامہ
ایک کاڑھا ہوا رومال
بھیگی آنکھوں سے ادا ہوتے ہوئے وہ سجدے، وہ قیام
جذبِ الفت کی عبادت
شب کی تاریکی میں
پچھلے پہر کی وہ ریاضت
ہم کہ جو عہدِ گزشتہ کے اسیرانِ وفا
ہم کہ واقف ہیں کہ کیا ہوتے ہیں اربابِ نظر
ہم جو قائل یہ رہِ شوقِ نوردی کیا ہے
ہم کہ رخصت ہوئے دامانِ محبت میں لئے
مضحمل سی وہ صدا
ایک مجروح سا دل
اپنے اشکوں کے گہر
گریہ زاری کا زہر اپنی نسوں میں بھر کے
اے رگِ جاں سے بھی نزدیک ترین
مہرو مہ سب رہیں تیرے سلامت میرے یار
بس یہ کچھ قیمتی چیزیں ہیں بچا کر رکھنا
پیارے منصف یہ محبت کی روایات میں ہے
موسمِ ہجر کو مہمان کرو
ہاں مگر بعد ہمارے
تم کواڑوں کو ذرا زور سے بند کرلینا
کہیں ایسا نہ ہو بارِ دگر
ماہتابی سا کفن اوڑھ کے لوٹ آئیں ہم
اور پچھتاؤ تم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رابعہ بصری

وڈیو دیکھیں: خوبصورت بچوں سے سنیں روشنی کا گیت feel the light

Advertisements

3 Comments

Comments are closed.