غزل۔۔۔۔۔۔از سعدیہ بتول

اس سے کہنا حیات باقی ہے
عشق زندہ ہے ذات باقی ہے

ہم نے جانا وصال لمحوں میں
ان کے چہرے پہ رات باقی ہے

اب کے زہرِ جفا ہی دے جاؤ
مرگ باقی ہے مات باقی ہے

تیری قربت میں دن نکل آیا
دل کے آنگن میں رات باقی ہے

اس محبت کو موت آ جائے
گر جو میری حیات باقی ہے

” سعدیہ بتول “

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.