چھت۔۔۔۔۔۔۔از نوشین قمر

وہ اک کمرے کی چهت یاد ہے اب تک ہاں محض اک کمرے کی چھت چهوٹا سا اک صحن تها شاید بن دروازے چار دیواروں کا اک پردہ بهی ہم پانچ لوگ اور اک کمرے کی وہ چهت وہ اک چولہا بهی یاد ہے اب تک جو لکڑی کے اک ٹکڑے پر دن میں تین […]

Read More…

غزل۔۔۔۔۔۔از سعدیہ بتول

اس سے کہنا حیات باقی ہے عشق زندہ ہے ذات باقی ہے ہم نے جانا وصال لمحوں میں ان کے چہرے پہ رات باقی ہے اب کے زہرِ جفا ہی دے جاؤ مرگ باقی ہے مات باقی ہے تیری قربت میں دن نکل آیا دل کے آنگن میں رات باقی ہے اس محبت کو موت […]

Read More…