پچاس لفظوں کی کہانیاں۔۔۔۔۔۔۔۔عروج احمد

” سطحیت ”

عجب کردار تھا وہ ۔۔۔ شاید تیسری جنس سے ۔۔۔ توجہ کھنچنے کے بے سروپا طریقے ۔۔۔ کچھ اتنے بے ڈھنگے کہ غصہ بھی آئے ۔۔۔ لیکن کمال کی استقامت ۔۔۔
لوگ اس کی حرکتوں سے محظوظ ہوتے ، تاؤ کھاتے ۔۔۔ سب نے سب دیکھا ماسوائے اس کی آنکھوں کے ۔۔۔ اداسی اور دکھ سے بھری آنکھیں ۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ بھی پڑھیں: رکی ہوی صدی از سدرت لمنتہٰی

” یومِ یکجتی کشمیر ”

‘ پانچ فروری کی چھٹی کو کیسے استعمال کیا ؟ ‘ مومی نے بنٹی سے پوچھا ۔

‘صبح اٹھ کر ناشتہ کیا ۔ پھر بھرپور عزم کے ساتھ یومِ یکجتی کشمیر کی ریلی میں شرکت کی ۔۔۔ کھانا کھایا ۔۔۔ آرام کیا ۔۔۔ رات کو ایک ہندی مووی دیکھی ۔۔۔ فٹ مووی ہے یار ۔۔۔’

مومی ہکا بکا رہ گیا ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ بھی پڑھیں:دیس پردیس از صوفیہ کاشف

” بنیاد ”

‘ایک بہترین معاشرہ کیسے تشکیل کیا جائے ؟’ سیمینار میں سوال کیا گیا ۔

‘بہترین فرد بنا کے ۔’

‘یہ کیونکر ممکن ہو گا ؟’ پوچھا گیا ۔

‘ فرد سے افراد بنتے ہیں ۔۔۔ افراد سے معاشرہ ۔۔۔ معاشرے سے قوم ۔۔۔ قوم سے اقوام ۔۔۔ بنیاد درست ہو گی تو عمارت درست ہی تعمیر ہو گی ۔’ جواب آیا ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وڈیو دیکھیں:جھیل لولوسر،پاکستان

” متاعِ حیات ”

دوسری منزل کی کھڑکی سے جھانکتے ، اس نے ایک مفلوک الحال عورت کو دیکھا ۔۔۔ دو بچے ۔۔۔ دو گٹھڑیاں ہمراہ تھیں ۔۔۔ گٹھڑیوں کے اندر کیا تھا ، کچھ اندازہ نہ ہوا ۔

دفعتا ایک جنازہ نمودار ہوا ۔ میت کے ہمراہ بھی دو گٹھڑیاں تھیں ۔۔۔ دائیں ، بائیں ۔۔۔ ان گٹھڑیوں نے رات کو کھلنا تھا ۔۔۔

(مرکزی خیال “نیل زہرا” کے افسانے “متاعِ حیات” سے ماخوز)
…۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وڈیو وڈیو دیکھیں:قراقرم ہای وے ،پاکستان

” ایک ہی صف ”

عجب سا غصہ تھا اسے ۔۔۔ کہاں گیا وہ دور جب کیلئے فرمایا گیا تھا ‘ایک ہی صف میں کھڑے ہو گئے محمود و ایاز
نہ کوئی بندہ رہا نہ کوئی بندہ نواز’۔۔۔

‘ﻧﮧ ﻭﮦ ﻏﺰﻧﻮﯼ ﻣﯿﮟ ﺗﮍﭖ ﺭﮨﯽ ﻧﮧ ﻭﮦ ﺧﻢ ﮨﮯ ﺯﻟﻒِ ﺍﯾﺎﺯ ﻣﯿﮟ ۔۔۔’ میرے منہ سے بے اختیار نکلا ۔

(یہ کہانی اشرافیہ کے ایک ادارے کی جانب سے ادارے کے ملازمین پر ادارے میں قائم مسجد میں نماز پڑھنے پر پابندی لگائے جانے کی خبر پر لکھی گئی ہے ۔)

عروج احمد

Advertisements

1 Comment

Comments are closed.