مگر!…………از صوفیہ کاشف

اگر جو تری ہر یاد کے بدلے ترے آنگن میں پھول کھلنے لگتے تو کیسے گھر کے سب دیوارو در، ہر ذینہ،ہر آنگن ، پھولوں سے بھر چکا ہوتا پاؤں تک دھرنے کو وہاں تجھے رستہ نہیں ملتا، اور اگر جو میری آنکھ میں اترا تری صورت سے جڑا ہر اک خواب قدموں کے نیچے […]

Read More…

پچاس لفظوں کی کہانیاں۔۔۔۔۔۔۔۔عروج احمد

” سطحیت ” عجب کردار تھا وہ ۔۔۔ شاید تیسری جنس سے ۔۔۔ توجہ کھنچنے کے بے سروپا طریقے ۔۔۔ کچھ اتنے بے ڈھنگے کہ غصہ بھی آئے ۔۔۔ لیکن کمال کی استقامت ۔۔۔ لوگ اس کی حرکتوں سے محظوظ ہوتے ، تاؤ کھاتے ۔۔۔ سب نے سب دیکھا ماسوائے اس کی آنکھوں کے ۔۔۔ […]

Read More…