ارضی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کوئی پی کے نام کا کنگن ہو! کوئی چُوڑا ہو! جسے بانجھ کلائیاں پہن سہاگن ہو جاویں مرا روپا، جوبن ہار گِیَو! سرکار سائیں! سانول کا بچھوڑا مار گِیَو! مرے سینے درد غموں کے تیر اتار گِیَو! بیمار نصیبوں بیچ سَجَا منجدھار گِیَو! منجدھار پڑے! سرکار سائیں! غمخوار سائیں! اک بار سائیں! سنو عرضی بس […]

Read More…

“رقص” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سعدیہ بتول

سنو اے ہم سفر میرے یہی کانٹوں بھرا رستہ میری منزل کو جاتا ہے کہ اب خوشبو کا یہ موسم نہیں اس دل کو بھاتا ہے تمھارے ساتھ ہو کر بھی دلِ وحشی اکیلا ہے میرے جیون کی وادی میں عجب وحشت کا میلا ہے میں اس وحشت کے میلے میں اکیلی رقص کرتی ہوں […]

Read More…

“گنجلک بیلیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔…ثروت نجیب

ہزاروں باتیں دل کی مُنڈیروں پہ چڑھی گھنی بیلوں کی مانند بےتحاشا بڑھتی جا رہی ہیں کشف کے کواڑوں پہ اک چھتنار سا کر کے میری آنکھوں کے دریچوں تک اس قدر پھیلی ہوئی کہ جہاں بھی اب نگاہ ڈالوں ہریاول ہی دکھتی ہے رازداری کا کلوروفل میرے قرنیوں سے آ چپکا ہے جس کی […]

Read More…