بے بس

ہلکی ہلکی اداس ہوا

نیند تیری چراے گی

کوئل نے کوئ گیت بنایا

جب بلبل گانا گائےگی

تمھیں یاد ہماری آئے گی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جب اندھیری رات میں

سفر نہ کوی ختم ہوا

جب دور کہیں آسماں پر

ستارہ کوی ٹوٹ گرا

چاند پہ بیٹھی بڑھیا جب

ہلکا سا مسکرایا گی

تمھیں یاد ہماری آئے گی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دور سے دیکھ کر مسکرانا

پاس سے یونہی گزر جانا

چند قدم پھر چل کر

مسکراتے لوٹ آنا

یونہی  کوی بھولی بسری

بات ذہن میں آئے گی

تمھیں یاد ہماری آئے گی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میری یادوں سے گھبرا کر

بے معنی بات کوئ سوچو گے

ہر بات ختم گر مجھ پر ہوی

بہکے ذہن کو پھر سے روکو گے

تھک کر تم نے موند لی آنکھیں

تصویر میری ابھر آئے گی

تمھیں یاد ہماری آئے گی!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

صوفیہ کاشف

یہ بھی پڑھیں:وقت

One thought on “بے بس

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s