رکی هوئی صدی. اذ سدرت المنتہی

میں نے کہا “آو کہ تمهیں بتاوں کہ یادیں تو مجهے بهی نهیں چهوڑتیں

یوں لگتا ہے جیسے کوئی لمحہ من میں ہی رک گیا هے-

زندگی چل رہی هے .وقت کی ڈور کهسکتی جارهی هے.

میرے قدم مجهے راستوں گهسیٹتے جارهے هیں..اور راستہ طویل تر هوتا جارها هے.

میں تو چلتا رها هوں..مگر میرا دل ..

دل کہیں رکهہ کے بهول آیا هوں.۔

میرا دماغ ..جسے سوچ خلائوں میں اڑائے پهرتی هے..جو هاتهہ ہی نهیں لگتا.

اور میری روح..لگتا هے میری روح کسی سو سال پرانے درخت کی جهاڑیوں میں پهنسی هوئی هے. .تڑپتی تو هے ساتهی…مگر رهائی نهیں پاتی..

میں اپنی روح کی طرف بارہا مڑ مڑ کر دیکهتا هوں .مگر اس تک قدم جا نہیں پاتے..سفر تو چل رها هے..جیسےجیسے میرے قدم راستوں میں بڑهتے هیں..اپنی روح سے بچهڑتا جارها هوں ..معلوم هوتا هے جیسے مرچکا هوں…اور سچ پوچهو تو دوست مر ہی چکا هوں”.

کہنے لگی . “کتابیں پڑهنا تو چهوڑدی ہیں..پھر بهی ایسی باتیں کرتے هو.اس قدر بے چین رهتے هو.

پہلے تو ایسے نہ تهے…یاد ہے کبهی زندگی سے بهرپورگفتگو ہوتی تهی..

کتنے ہی پرجوش رہا کرتے تهے.اور پر امید بهی..

اب تو سب کچهہ مل بهی چکا هے…اسکے باوجود اتنی بے چارگی..اس قدر تشنگی..ایسی بے بسی کیوں آخر..؟؟”

” سب کی فهرست میں کیا کچهہ رکها هے بهلا؟جانناچاهتا تها

وهی جو تمهاری ضرورتوں میں کبهی شامل رہا هے….گهر.ملازمت..اورپیسہ.”

وہ مجهے اپنی ضروریات گنوارہی تهی..اور میری ہنسی چهوٹ گئی.

بس دوست..خواب محبت اور روشنی کو کس جرم کی سزا میں میری فهرست سے تم نے نکال پھینکا ہے

“شکوہ کیسے نہ کرتا

تمهاری ترجیحات تو فقط یہی چیزیں تهیں .جو میں نے تمهیں گنوائی ،باقی سب تو کتابوں میں رکهہ کے بهول چکےایسے کے صفحہ نمبر تک یاد نهیں..

مانتی ہوں کتاب تو میں بهی اپنی پرانی شیلف کے خانے میں بہت سی کتابوں کےدرمیان رکهہ کے بهول چکی هوں.اب اگر ڈهونڈنا چاہوں بهی تو مل نہ پائے.

ویسے بهی اتنا وقت ہی کہاں کہ پرانی شیلف کا بند خانہ کهولوں..یہ بهی ڈر هے کے کہیں پهر سے کتابوں میں گم هوجائوں گی اور اس بار کهوئی تو خود کو بهی مل نہ پائوں …گهر والے تو ڈهونڈتے هی ره جائیں گے.

خود سے تو کسی حد تک بچهڑ چکی هوں..مگر گهر والے نهیں کهو نا چاهتے..کیوں کے میرے سوا کتنے گهر کے کام ادهورے رهتے هیں..

اسی لئے ۔۔۔۔۔۔۔..بس خود کو گهر کے کاموں میں گنوایا هے..

میں نے سوچا شاید خود کو بهلاتی هے..مگر کسی حد تک ……..سچ بهی تها..

تو تمهارا دل گهر کے کاموں میں لگ گیا هے.(.یا پهر میری طرح کتاب کے صفحہ نمبر نا معلوم میں اپنا آپ رکهہ کے بهلاچکی هو)وگرنہ تمهاری مصروفیات گهر تک تو محدود نہ تهیں..

کھوٹے سکے اذ صوفیہ کاشف:یہ بھی پڑھیں
میری بات پر جانے کیوں هنس دی.

کہنے لگی دل کهیں تنہائی میں ہی کهوگیا هے .

میں نے کہا ڈهونڈ لاوں؟

تو کیسے…کہاں سے

کہنے لگی .تنہائی میں ملنا.

بتایا وہ تو ملتی ہی نهیں هے اسقدر مصروف رهتاہوں..کیا کروں دوست..

ملازمت بهی تو کرنی هے..گهر چلانا ہے

تهکا ہوا لوٹتا ہوں اور اماں کی وہی پرانی شکایتیں شروع..

نہ معلوم ماں کب خوش هوگی..حج کرکے آئی ہیں..بہن کی شادی میری ملازمت ..سب اچها چل رہا هے..مگر..

کہنے لگی ماں کیا کہتی ہے؟

بتایا کے کتنی ہی شکایات ہیں..

سر فهرست یہ کے شادی کیوں نہیں کرتا..

گهر کے لئے وقت نہیں..اپنا خیال نہیں رکهتا.

جب اپنا خیال رکهنے کی خواہش تهی تب….

کیا بتاؤں اب کے فرصت میں یادیں ڈسنے لگتی ہیں..گهر میں رہوں تو گهر کی دیواریں کهانے کو دوڑتی ہیں..جان بوجھ کر بهی خود کو مصروف رکها هے.پهر سے تنهائی میں گم هونا نہیں چاهتا..دل کهوچکا هوں

خود کو کهونا مهنگا پڑے گا..زندگی بهی تو کاٹنی هے

مدهم مسکرائی..پگلے..ماں بچوں کی خوشی چاہتی هے..اسکی خواہش نا جائز نہیں..کہا مان لو..پہلے انهیں تمہاری لاپرواہی نے پریشان کیا اب تمهاری تنهائی انکو کهاتی هے..

شروع سے ماں کی طرف دار تهی..اب بهی وهی کر رهی تهی..میں ہنس بهی نہ سکا…جانتی بهی تهی کے اپنی خواہشوں کا مارا هوں..ماں کی خواہش کا بوجهہ بڑا هے

تم بتاو دوست زندگی کیسی گزر رهی هے؟”خود سے اس تک آنے میں بڑی دقت تهی.

کهوگئی ایک بار پهر ..

زندگی میرے کمرے میں سانس لیتی هے.کتابوں کی شیلف میں قید زندگی هے

میرے سنگل بیڈ پر سوئی زندگی هے

گویا کے زندگی بدل گئی..تم نہ بدلیں.ہنسی اس پر آئی یا زندگی پر سمجهہ نہ سکا.

مدهم ہنسی..اور پهر چپ کا لمحہ..کہنے لگی..

!زندگی لاکهہ بدلے محبت رنگ نہیں بدلتی..

یاد آیا..مجهے زندگی اور خود کو محبت کہنے والی..

محبت اداس تو کردیتی هے.کیا کہتا

کچهہ تو دیتی هے نا. اسی میں خوش تهی

سب کچهہ تو چهین لیتی هے.مجهے اختلاف تها.

اپنا آپ تو سونپتی هے نا..تکرار ثابت تهی

کیا کروں دوست.مانا کے سب کچهہ هے مگر جو نہیں وہ محبت هے.مجهے اپنا دکھ رلانے لگا.جو اس سے وابستہ تها

دوست تمهارے احساس سوئے پڑے هیں. کوئی پرانی کتاب کهول کے دیکهو محبت وہیں ملے گی.فکر مند ہوگئی.

دوسری موت اذ حمیرا فضا :یہ بھی پڑھیں

بتایا جو ہے وقت کا محتاج هوں اور سکون کے لئے ترستا ہوا جب باهر نکلوں تو سڑک پر گاڑیوں کا شور سکون اڑادیتا ہے..روڈ پر نکلتے ہی عجیب خوف گهیرے میں رکهتا هے۔ لاشعوری طور پہ روڈ ایکسیڈنٹ میں کچلا گیا هوں. سچ پوچهو تو میں

لاوارث لاش کی طرح بے شناخت پڑا ہوں..ہر گاڑی مجهے کچل کے گزرجاتی هے

بڑی مشکل سے خود کو مردہ خانے تک لایا ہوں..جہاں شناخت کے انتظار میں رکهی بدبو کرچکی هے ایسی بدبو جو کبهی زندگی

میں محسوس نہ ہوئی تهی..ایسی بدبو

اس خیال نے عجیب ناگوار احساس بهردیا.

خوشبو اور بدبو کا ملا جلا تاثر عجیب تها

بدبو ..جو میری لاش میں تهی

خوشبو ‘جو اس کے لہجے میں تهی

سحر جو اس کی آواز میں تها..جس نے صدا جکڑے رکها.

دیکهو دوست..ایک کام کرنا مجھے بے شناخت نہ مرنے دینا..مربهی جاوں تو شناخت کرنا..دیکهو کتبہ بهی لگانا..محبت کے نام کا

میری بات سن کر خوف زدہ ہوگئی..کہنے لگی محبت نہیں مرتی دوست .تم ایسی باتیں نہ کرو. دیکهو بم دهماکوں اور اغواہ کے کیس سے ڈر کر پہلے ہی باہر نکلنا چهوڑچکی هوں…ٹی وی اخبار تک سے ناطہ توڑ لیا هے

گهر کے کاموں میں خود کو الجهایا ہے

کیا بتاوں کہ کبهی چائے کے پانی میں آنسو مل جاتے هیں. چائے کڑوی زہر بن جاتی هے.گهر والے کہتے ہیں چینی کی جگہ زہر ملادیا..کیا بتاوں کے آنسو زہر کیوں بن جاتے ہیں

کبهی خواہشوں کو هنڈیا میں پکاوں ..بهونوں تو عجب رنگ نکهرتے ہیں۔ بریانی کے چاولوں میں رنگ ملانے کی ضرورت نہیں رہتی..باورچی خانے میں خواہشوں کی خوشبو بکهرنے لگتی هے.

گهر والے کهانے میں ملی خواہشیں بهی کهاجاتے هیں..

بچی ایک محبت ہے جسے کتابوں میں چهپادیا هے.گهر میں کسی کو کتاب کا چسکہ نہیں .. جس لئے محبت تک رسائی ناممکن ہے

سجدہ سہو اذ صوفیہ کاشف یہ بھی پڑھیں!
اسکے لہجہ کا سحر اداس تها
میں نے محبت کا بوجھ ڈال دیا…یے بتاو مل سکتی هو..؟بتاچکی هوں گهر تک زندگی سمٹ گئی هے ..پهر سمندر کنارے مشینی دور کی باتیں کرکے کیا ملنا هے

محبت پانی میں بہہ جائے گی.سمندر کی تہہ تک اترجائے گی۔۔ پهر نہ ملے گی…لہروں سے بهی ڈرتی ہوں…

جبهی دور سے تماشہ کرتی لہر کو دیکهہ کے بهاگتی تهی..

چلو پهر کہیں صحرا میں ملیں..دوست ویسے بهی مشینوں نے ریاضی کے حساب کی طرح الجهایا ہوا ہے..اور سمندر کی خوف ناکی تو مجهے بهی ڈراتی هے.

تمهیں لاکهہ بتایا دوست کہ محبت کتاب میں قید ہے.کهولوں گی تو سپنے سوکهی پتیوں کی طرح بکهر جائیں گے.خواہشیں بے رنگ اور خواب پهڑپهڑاتے هوئے پر نکال کر اڑجائیں گے..

میں نے کها دیکهو دوست..پتهر کے دیس میں ملتے ہیں..

کیوں کہ ڈرتا ہوں.تمهیں پهر سے کهودینے سے

دیکهو محبت کی بات کریں گے تو کبهی زندگی پر .وہاں جاکر محبت کو کتاب سے آزاد کریں گے..لہجے محبت کی روح بهر کے آباد هوجائیں گے.لوٹیں گے تو محبت کی چاشنی میں لہجے ڈوبے ہونگے..زندگی کے لئے آسانی لائیں گے..محبت بانٹیں گے تو مسائل کمزور ہونگے.

میری ضد پر راضی ہوئی..محبت کی خاطر پتهر کے دیس میں ملاقات کے لئے حامی بهرلی.—————–

پتهر کے دیس میں ملا تها

محبت کی بات کرتے ہوئے کہنے لگا…

سنو..!دوست..ہمارے مسائل محبت کو کهاگئے هیں

کس قدر کهوکهلے ہوگئے ہیں..میں تو سوچتا ہی ہوں..کیا تم نے کبهی سوچا اگر سو سال پہلے پیدا ہوتے..اور محبت ہوتی تو مسائل کتنے مختصر ہوتے..

میں نے کہا دیکهو …سوسال پہلے بهوک محبت کو کهاجاتی دو ویلے کهانے کی پریشانی ساتهہ لے کر جنگل بیابانوں میں پهرتے..

کہنے لگا بهوک کا مسئلہ تو آج بهی زندہ هے

میں نے بتایا دیکهو محبت همیشہ مسائل کے بیچ ہی جنم لیتی هے..

کہنے لگا کیا بهوک کا مسئلہ سو سال بعد بهی زندہ رهے گا ؟؟پهر تو دوست اور بهی شدت اختیار کرجائے گا یہ مسئلہ..دیکهو ..پہلے انسان کی بهوک دو ویلے تک محدود تهی…

اب گاڑیوں مشینوں بنگلوں کی طلب نے آلیا..دن بہ دن بهوک کی شکلیں بدلتی جائیں گی..جتنا روپیہ بڑهے گا بهوک اس سے ایک قدم آگے چلے گی..

وقت کے ساتهہ ساتهہ ضرورتوں اور خواہشوں کا سمندر پانی کے سمندر پر بچهتا جائے گا….اور سمندر کا پانی مزید کهارا هوتا جائے گا

دنیا کی آبادی بڑه رهی هے..پهر گهٹتی جائے گی..زمین سمٹتی جاتی هے..دیکهو کتنی جلدی لوگ پیدا ہورہے ہیں…اس سے کہیں زیادہ جلدی مر رهے هیں..

محبت ابهی کتابوں میں ہے…پهر خوشبو بن کر ہواوں میں اڑجائے گی..اور آہستہ آہستہ لوگ محبت کے نام سے نا آشنا ہوجائیں گے..

احساس کو ہوس کی بهوک کهارہی هے..بهوک صرف روٹی نہیں..محبت بهی کهاجاتی هے..

میں چپ هوئی..وہ ڈر گیا..

کہنے لگا آو کہیں بهاگ چلیں…محبت کو تو ہر هال میں بچانا هے..

چلو سمندر کی تہ میں اترجاتے هیں..

میں کیا کہتی…سمندر کی مچهلیاں کهاجائیں گی..پتہ بهی ہے کے چهوٹی مچهلیوں کو بڑی مچهلیاں کهاجاتی هیں..

سوچ میں پڑگیا…چلو پهر خلاء میں اڑجائیں..
کہا بهی کہ گهٹن ہوگی..

کہنے لگا سو سال بعد محبت کرتے تو بهی خلاء میں ہی گهر بنانے کی خواہش ہوتی .سیاروں کی سیر کرتے..پهر اب کیوں نہیں..؟

دیکهو دوست..هم زمین کو چهوڑ کر کہیں نہیں بس سکتے..کیا سیارے پر ہمیں…بادل بارش..موسم مل سکے گا. کیا اناج پانی درخت هونگے؟

پهر محبت کا جو قحط پڑا تو زندہ رہنے کے لئے کیا ره جاتا هے.

اور ویسے بهی دوست..ہماری مستیاں زمین ماں نے برداشت کی ہیں..کوئی بهی سیارہ ہمارے گناهوں کا بوجهہ اپنے سینے پر نہیں سهارپائے گا..ایک ہی غلطی پر دربدر کیا جائے گا ہمیں..

>ل کہنے لگا : وهاں ہم دهماکہ تو کیا گولی تک نهیں چلاسکتے..یہاں تک کہ اکڑ کے چل بهی نهیں سکتے…

دیکهو !پهر بهی زمین سے تو امن ہی هوگا ناں!,,,,,,

بڑا دکھ ہوا ۔سمجهایا اسے کے دیکهو ماں کو چهوڑنے کی بات نہ کرو..ماں کی گود هماری پہلی اور آخری پناه گاه هے..

اس کے دامن میں امان هے..وہ تو بس همنے هی خود کو کئی خواحشوں کی حسرت اور ضرورتوں کی کثرت میں اجهایا هے

> سب مل بهی جائے .جو نهیں ملتا وہ سکون هے

ٹهیک هے ساتهی..پر زمین تو هر جگہ سے ایک سی مگر انسان شکلیں زبانیں بولیاں ..کلچر تهزیب رنگ و روپ کیوں الگ هے؟

سوال اچها تها.

میں نے کها سارے فطرت کے رنگ هیں.سب کچهہ الگ سهی مگر.احساس سب کے ایک هیں زندگی ایک هے جیسے .محبت ایک هے

محبت کی بات پر مسکراتا تها

کهنے لگا هم ایک دوسرے سے نفرت کیوں کرنے لگ جاتے هیں؟

میں نے کها بهٹک گئے هیں کهنے لگا زندگی کے بارے میں کهو..

میں نے کها مجهے اور خود کو دیکهو. آسمان اور زمین کو دیکهو..

کهنے لگا نگاه اوپر نهیں اٹهتی..

راستوں کی ٹریفک میں اجهہ جاتا هوں..

زمین کو دیکهو تو چکنی مٹی کی خوشبو اپنی طرف کهینچتی هے..

سمندر میں دیکهوں تو مچهلیاں پکڑنے کا شوق ڈبوتا هے

خواحشیں اور ضرورتیں آپس میں اجهی هوئی هیں ..سلجهانے بیٹهوں تو رات گزرجائے..ایک رات صدی برابر حساب لیتی هے..بهت الجها هوں

یے تک بهلا بیٹهے کے کس مقصد کے تحت آئے تهے.

اور یے بهی کے پتهر کے دیس میں وقت رک جاتا هے

اور اب لگتا هے جیسے پتهر هوچکے هیں..

ساتهی ہم تو محبت کا عهد لیکر پتهر کے دیس میں آئے تهے..پهر کیا هوا؟یے همارے بال کیوں سفید هوگئے..

کیا صدی گزرگئی؟

ساتهی میری طرح حیران تها..اور میں پریشان..مگر یهاں تو وقت نهیں چلتا..هم بوڑهے کیسے هوئے؟

ہم واقعی صدی کے شروع میں یهاں آئے تهے..اور اب صدی اختتام کو هے..

زمین کی زندگی بهت تیز رفتاری سے آگے نکلتی جارهی هے.

ساتهی کیا اب زندگی کو محبت کی ضرورت نہ رهی هوگی..؟اس کا مسئلہ محبت تهی..

میں نے سوچا محبت خوشبو بن کر هوائوں میں بکهر گئی هوگی..اب تو کتاب سے علم بهی اٹهہ چکا هوگا.

وہ کهنے لگا میں نے کچهہ آوازیں سنی هیں..لوگ کهہ رهے تهے هم ایک صدی سے اسی پتهر پے بیٹهے تهے..اور یهیں پتهر هوگئے

کیا هم صرف سن سکتے هیں ساتهی…کسی سے بات نهیں کرسکتے.؟محبت سے بهی نهیں؟مجهے بهی محبت کا مسئلہ تها.

میں اسی صدمے میں تهی وہ بولا

ساتهی زندہ مردے بولتے هیں مگر ان کی بات کوئی نهیں سنتا.

دیکهو هم هل نهیں سکتے..چل نهیں سکتے..هم پتهر هیں…اور صدی ..

اسنے مجهے چهونا چاها تو پهر سے پتهر کا هوگیا اور صدی پهر سے جهٹکا کهاکر رک گئی..جب کوئی کسی کو چهونا چاهے تو وہ پتهر کیوں هوجاتا هے..کس سے کهتی..لفظ اور.احساس کی موت هوچکی تهی.

لوگ آتے هیں همیں دیکهتے هیں..بولتے هیں..

هم سنتے هیں..مگر بول نهیں سکتے..بولیں بهی تو کسی کو سنائی نہ دے

هم هل نهیں سکتے کیوں کے هم پتهر هیں…اور صدی بهی رکی هوئی هے.

مگر محبت سارا اسی کا مسئلہ ہے-

—–

Advertisements

4 thoughts on “رکی هوئی صدی. اذ سدرت المنتہی

  1. بہت خوب!
    مجھے تحریر پسند آئی۔
    صوفیہ،اس میں ھ اور ہ کا جو ٹائپنگ ایرر آ رہا ہے وہ دور کیا جا سکتا ہے؟ یہ خلل آنکھوں کو چبھ رہا ہے اور تحریر کی روانی میں حائل ہے۔

    Liked by 1 person

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s